’روس بھی برطانوی سفارت کاروں کو جلد ملک بدر کرے گا‘

سرگئی لاوروو تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption برطانوی وزیر اعظم ٹریزا مے نے روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف کو برطانیہ کا دورہ کرنے کی دعوت بھی منسوخ کر دی ہے

روس کے وزیرِ خارجہ سرگئی لاوروف نے کہا ہے کہ برطانیہ کے شہر سیلیسبری میں سابق روسی انٹیلی جنس افسر اور ان کی بیٹی کو زہر دینے پر روس کے 23 سفارت کاروں کو نکالنے کے ردِعمل کے طور پر روس برطانیہ کے سفارت کاروں کو ملک سے نکالے گا۔

جب صحافیوں نے سرگئی لاوروف سے پوچھا کہ آیا ماسکو بھی برطانیہ کی وزیر اعظم ٹریزا مے کی جانب سے روس کے 23 سفارت کاروں کو برطانیہ سے نکالنے کے اعلان کے حوالے سے اپنا ردِ عمل دے گا تو انھوں نے کہا ’یقیناً ہم بھی برطانوی سفارت کاروں کو نکالیں گے۔‘

جمعے کو قزاقستان کے دارالحکومت آستانہ میں ایران اور ترکی کے وزرائے خارجہ کے ساتھ شام کے حوالے سے ہونے والے مذاکرات کے بعد بات کرتے ہوئے روسی وزیرِ خارجہ کا کہنا تھا ’ماسکو بھی برطانوی سفارت کاروں کو ملک بدر کرے گا۔‘

اس بارے میں مزید پڑھیے

23 روسی سفارتکاروں کو ایک ہفتے میں برطانیہ چھوڑنے کا حکم

روسی ایجنٹ پر حملہ: روس کو وضاحت کے لیے ڈیڈ لائن

’روسی جاسوس کی بیٹی کو زہر نہیں دینا چاہیے تھا‘

برطانیہ کے ’روسی جاسوس‘ نامعلوم مواد سے زخمی

اس سے قبل روسی صدر کے ترجمان نے کہا تھا کہ ولادیمر پوتن بالآخر اس آپشن کو منتخب کریں گے جو ’ماسکو کے مفادات‘ کے لیے سے زیادہ مناسب ہو گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA/ Yulia Skripal/Facebook
Image caption برطانوی وزیر اعظم ٹریزا مے نے برطانویی شہر سیلیسبری میں سابق روسی انٹیلیجنس افسر اور ان کی بیٹی کو زہر دینے پر روس کے 23 سفارت کاروں کو ملک سے نکالنے کا اعلان کیا تھا

دوسری جانب برطانیہ، فرانس، جرمنی اور امریکہ کے رہنماؤں نے جمعرات کو ایک بیان میں برطانیہ کے شہر سیلزبری میں یولیا اور سرگئی سکرپال پر حملے کی مذمت کرتے ہوئے اسے ’برطانوی حاکمیت پر حملہ‘ قرار دیا ہے۔

خیال رہے کہ برطانوی وزیر اعظم ٹریزا مے نے سیلیسبری میں سابق روسی انٹیلی جنس افسر اور ان کی بیٹی کو زہر دینے پر روس کے 23 سفارت کاروں کو ملک سے نکالنے کا اعلان کیا تھا۔

برطانیہ نے یہ قدم اس وقت اٹھایا جب روس نے برطانیہ کو اس زہر کے حوالے سے وضاحت دینے سے انکار کر دیا۔

برطانوی وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ سفارت کاروں کو ملک چھوڑنے کے لیے ایک ہفتہ دیا گیا اور یہ سفارت کار وہ انٹیلی جنس آفیسر ہیں جن کی شناخت مخفی رکھی گئی۔

ٹریزا مے نے روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف کو برطانیہ کا دورہ کرنے کی دعوت بھی منسوخ کر دی ہے۔ اس کے علاوہ اعلان کیا گیا ہے کہ برطانوی شاہی خاندان روس میں ہونے والے فیفا ورلڈ کپ کی تقریب میں شرکت نہیں کرے گا۔

روس نے سیلیسبری میں روس کے سابق انٹیلیجنس افسر 66 سالہ سرگئی اور ان کی 33 سالہ بیٹی یولیا کو زہر دینے میں ملوث ہونے کی تردید کی ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں