امریکہ، آسٹریلیا اور یورپی ممالک کا درجنوں روسی سفارت کاروں کو ملک بدر کرنے کا حکم

ماسکو تصویر کے کاپی رائٹ AFP

برطانیہ میں ایک سابق روسی جاسوس کو زہر دے کر قتل کرنے کی کوشش کے بعد امریکہ اور آسٹریلیا سمیت کئی ممالک نے روس کے سفارت کاروں کو ملک سے نکل جانے کا حکم دیا ہے۔ ان ممالک میں سب سے زیادہ روسی سفارت کار ملک بدر کرنے والا امریکہ ہے جس نے 60 سفارت کاروں کو ملک سے نکل جانے حکم دیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق 20 سے زیادہ ممالک برطانیہ کے ساتھ اتحاد کرتے ہوئے 100 سے زیادہ روسی سفارت کاروں کو ملک بدر کر رہے ہیں۔

اسے تاریخی اعتبار سے سرد جنگ کے بعد روسی سفارت کاروں کی سب سے بڑی ملک بدری قرار دیا جا رہا ہے۔

23 روسی سفارت

روس کا 23 برطانوی سفارت

آسٹریلیا بھی روسی سفارت کاروں کو ملک بدر کرنے والے ملکوں کی فہرست میں شامل ہو گیا ہے۔ وزیرِ اعظم میلکم ٹرن بل نے کہا کہ یہ ’شرمناک حملہ ہم سب پر حملہ ہے۔‘

جرمنی اور فرانس نے بھی پیر کو چار روسی سفارت کاروں کو ملک سے نکل جانے کا حکم دیا ہے۔

جن 60 سفارت کاروں کو امریکہ نے ملک چھوڑنے کا حکم دیا ہے ان میں سے 48 واشنگٹن میں روسی سفارت خانے کے سفارت کار ہیں جبکہ باقی نیو یارک میں اقوام متحدہ میں تعینات ہیں۔

یورپی یونین کے رہنما گذشتہ ہفتے اس بات پر متفق ہوئے تھے کہ اس بات کے قوی امکانات ہیں کہ برطانیہ میں سابق روسی جاسوس اور ان کی بیٹی کو زہر دینے میں روس ملوث ہے۔

تاہم روس اس واقعے میں ملوث ہونے کی تردید کرتا ہے۔

برطانوی خبر رساں ایجنسی روئٹرز کے مطابق امریکہ نے روس کے سیئیٹل میں قونصل خانے کو بند کرنے کا حکم دیا ہے۔

خیال رہے کہ اس سے قبل روس اور برطانیہ بھی ایک دوسرے کے سفارتکاروں کو ملک بدر کر چکے ہیں۔

برطانیہ نے سیلیسبری میں سابق روسی انٹیلیجنس افسر اور ان کی بیٹی کو زہر دینے کا الزام روس پر لگاتے ہوئے اس کے 23 سفارت کاروں کو ملک سے نکالنے کا اعلان کیا تھا۔

جس کے بعد روس نے جوابی کارروائی کرتے ہوئے 23 برطانوی سفارت کاروں کو بھی ملک سے نکالنے کا اعلان کیا تھا۔

ملک کتنے سفاتکار نکالے ملک کتنے سفاتکار نکالے
1 برطانیہ 23 9 اٹلی 2
2 امریکہ 60 10 لیتوئینیا 3
3 کروئیشیا 1 11 چیک ریپبلک 3
4 کینیڈا 4 12 نیدرلینڈ 2
5 جرمنی 4 13 ڈنمارک 2
6 فرانس 4 14 لیٹویا 1
7 فن لینڈ 1 15 ایسٹونیا 1
8 پولینڈ 4 16 یوکرین 13

اس کے علاوہ البانیہ نے دو روسی سفیروں کو، ہنگری، ناروے، میسیڈونیا اور سپین نے ایک، ایک روسی سفیر کو ملک چھوڑنے کا حکم دیا ہے۔

امریکی محکمہ خارجہ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’چار مارچ کو روس نے سیلیسبری میں انٹیلیجنس افسر اور ان کی بیٹی کو مارنے کی کوشش کی۔‘

بیان میں کہا گیا ہے کہ ’ہمارے اتحادی برطانیہ پر حملے سے کئی جانوں کو خطرے میں ڈالا گیا اور نتیجتاً ایک پولیس اہلکار سمیت تین افراد بری طرح زخمی ہوئے۔‘

انھوں نے اس حملے کو ’کیمیکل ویپنز کنوینشن اور بین الاقوامی قوانین کی سخت خلاف ورزی‘ قرار دیا ہے۔

دوسری جانب یوکرین کے صدر نے کہا ہے کہ ان کی جانب سے ’13 سفارتکاروں کو ملک بدر کرنے کا فیصلہ برطانوی شراکتداروں اور براہ اوقیانوس اتحادیوں کے ساتھ یکجہتی اور یورپی ممالک کے ساتھ تعاون میں لیا گیا ہے۔‘

اس سے قبل پیر کو کئی یورپی ممالک جن میں لیٹویا، لیتھوانیا، ایسٹونیا اور پولینڈ نے روسی سفیروں کو اپنے اپنے دفتر خارجہ میں طلب کیا۔

اسی بارے میں