شمالی کوریا کا تنازع ہے کیا؟

Image from North Korean media of four missile launches on 7 March 2017 تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

شمالی کوریا سے ٹکراؤ کا بحران اپنی بدترین حالت میں ہے جس کے بعد جوہری جنگ کا خطرہ ہے۔ امریکہ کے ساتھ براہ راست بات چیت کا مطلب ہے کہ امن بھی ممکن ہے لیکن یہ معاملہ پیچیدہ ہے۔ چلیں ایک قدم پیچھے چلتے ہیں۔

شمالی کوریا کے پاس کیا کچھ ہے

’جزیرہ نما کوریا کو جوہری ہتھیاروں سے پاک کرنے کا عزم‘

’کم سے ملاقات فائدہ مند نہ لگی تو واک آؤٹ کر جاؤں گا‘

شمالی کوریا جوہری ہتھیار چاہتا ہی کیوں ہے؟

جزیرہ نما کوریا دوسری جنگ عظیم کے بعد منقسم ہوا اور کمیونسٹوں پر مبنی شمالی حصہ سٹالنسکی اتھاریٹیریئن سسٹم میں ڈھل گیا۔

عالمی سطح پر تنہا ہو جانے والا یہ ملک کہتا ہے کہ جوہری ہتھیار اس کی واحد ڈھال ہیں جو اسے تباہ کرنے کے در پہ تلی دنیا سے بچا سکتے ہیں۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں
شمالی کوریا جوہری ہتھیار کیوں بنا رہا ہے؟

کیا وہ جوہری حملہ کر سکتےہیں؟

شاید، لیکن امکان ہے کہ وہ ایسا نہ کریں۔

شمالی کوریا نے چھ جوہری تجربے کیے ہیں۔ جن میں سے ایک کے بارے میں اس کا کہنا ہے کہ یہ ہائیڈروجن بم کا تجربہ تھا۔

اس کا یہ بھی دعویٰ ہے کہ اس نے نے ایک اتنا چھوٹا جوہری بم بھی بنا لیا ہے جو دور تک مار کرنے والے میزائل پر نصب کر کے ہدف پر داغا جا سکتا ہے۔

اس کے پاس ایسے بیلسٹک میزائل بھی ہیں جن کے بارے میں ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ شمالی کوریا کے بڑے حریف امریکہ تک مار کر سکتے ہیں۔

اس کے ردِعمل میں اقوامِ متحدہ، امریکہ اور یورپی یونین نے اس کے خلاف مزید کڑی پابندیاں عائد کر رکھی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

تو کم جونگ اُن کو ہی کیوں نہیں ہٹایا جا سکتا؟

شمالی کوریا کے میزائلوں کا ہدف جنوبی کوریا اور جاپان ہیں۔ شمالی کوریا کے خلاف کوئی بھی حملہ تباہ کن مزاحمت کا باعث بن سکتا ہے۔ اس کے نتیجے میں بے شمار کوریائی باشندے مارے جائیں گے۔

ایشیا کی سب سے بڑی طاقت چین خود اپنی حکومت کے گرنے کے خطرے کے بارے میں فکر مند ہے اور متحد کوریا اُن امریکی فوج کو براہ راست اس کی سرحد کے قریب لے آئیں گی جو فی الوقت جنوبی کوریا میں موجود ہیں۔

رویے میں بے مثال تبدیلی

ماضی میں شمالی کوریا کو غیر مسلح کرنے کی کوشش ناکام کوتی رہی ہیں۔

لیکن جنوری میں شمالی کوریا نے جنوبی کوریا کے ساتھ براہِ راست مذاکرات شروع کیے اور جنوبی کوریا میں منعقدہ سرمائی اولمپکس میں حصہ لیا۔ جبکہ اپریل میں دونوں ممالک کے سربراہان نے تاریخی ملاقات کی۔

شمالی کوریا نے امریکہ کو بھی براہِ راست مذاکرات کی دعوت دی جسے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے قبول کیا۔ اس کے علاوہ شمالی کوریا نے جوہری اور میزائل تجربات روکنے کا بھی اعلان کیا۔

دونوں کے درمیان یہ مذاکرات اگرچہ بے مثال ہوں گے تاہم اس کی تفیصلات، ایجنڈا اور وقت کے بارے میں کوئی مصدقہ اعلان نہیں کیا گیا۔

اسی بارے میں