شامی تنصیبات پر میزائل حملے، متعدد جنگجو ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

برطانیہ میں قائم مانیٹرنگ گروپ کا کہنا ہے کہ شمالی شام میں رات کو فوجی تنصیبات پر میزائل حملوں میں متعدد شامی حکومت کے حامی جنگجوؤں بشمول ایرانی جنگجو ہلاک ہوئے ہیں۔

شامی فوج کا کہنا ہے کہ حما اور حلب میں فوجی تنصیبات کو نشانہ بنایا گیا ہے۔ فوج کے بیان میں ہلاکتوں کا ذکر نہیں کیا گیا۔

تاہم مانیٹرنگ گروپ کا کہنا ہے کہ ان حملوں میں چار شامی اور 22 غیر ملکی جنگجو مارے گئے ہیں جن میں اکثریت ایرانیوں کی ہے۔

’زیارت کرنے جاؤ تو واپسی پر ایجنسیاں اٹھا لیتی ہیں‘

شام پر دوبارہ حملے کے لیے پوری طرح تیار ہیں: صدر ٹرمپ

ٹوماہاک میزائل: کتنے ہدف تک پہنچے، کتنے تباہ کیے گئے؟

شام پر حملے سے کیا حاصل ہو گا؟

ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ میزائل حملے کس نے کیے۔ یاد رہے کہ شام میں فوجی تنصیبات کو مغربی ممالک اور اسرائیل نشانہ بنا چکا ہے۔

شامی فوج کے ایک ذرائع کے حوالے سے سرکاری خبر رساں ایجنسی نے بتایا کہ اتوار کی رات کو شامی تنصیبات کو نئی جارحیت کا نشانہ بنایا گیا۔

ذرائع نے مزید بتایا کہ یہ حملہ ایسے وقت میں کیا گیا ہے جب دہشت گرد تنظیموں کو دمشق کے قریب شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

واضح رہے کہ حال ہی میں سرکاری فوج نے باغی گروپوں کو غوطہ میں شکست دی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

مانیٹرنگ گروپ کا کہنا ہے کہ ایک حملہ 47ویں بریگیڈ کے اس ڈپو پر کیا گیا ہے جہاں زمین سے زمین پر مار کرنے والے میزائل رکھے جاتے ہیں۔

شام کی حزب مخالف کی حامی ویب سائٹ اورینٹ نیوز نے بھی رپورٹ کیا ہے کہ حملے کے بعد تنصیب میں دھماکے ہوتے دیکھے گئے۔

اطلاعات کے مطابق حما کے مغربی علاقے سلحب میں فوجی تنصیب اور نیراب فوجی ایئرپورٹ کو بھی نشانہ بنایا گیا ہے۔

دوسری جانب ایرانی خبر رساں ایجنسی نے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ جنوبی حما پر میزائل حملے میں اسلحے کے ڈپو کو نشانہ بنایا گیا۔ تاہم اس خبر کی تردید کی گئی ہے کہ اس حملے میں ایرانی فوجی مشیران ہلاک ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں