خواتین کی نازیبا تصاویر لینے کی کوشش، مگر کیمرا پھٹ گیا

جوتا تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

امریکی ریاست وسکانسن میں پولیس کے مطابق ایک شخص اس وقت زخمی ہو گیا جب اس کے جوتے پر نصب کیمرا پھٹ گیا۔

اس 32 سالہ شخص نے یہ کیمرا خواتین کے سکرٹ کے نیچے سے نازیبا تصاویر اتارنے کے لیے لگا رکھا تھا۔

مقامی پولیس کے مطابق اس شخص نے خود کو پولیس کے حوالے کر دیا لیکن اس پر کوئی الزام عائد نہیں کیا کیوں کہ ابھی اس نے پہلی تصویر نہیں لی تھی کہ کیمرے کی بیٹری پھٹ گئی۔

میڈیسن شہر کے پولیس افسر ڈیوڈ ڈیکس ہائمر نے مقامی اخبار کو بتایا: 'جب دھماکہ ہوا تو انھیں جلنے کے زخم آئے، پھر انھوں نے ایک پادری کے سامنے اعتراف کر لیا کہ وہ کیا کرنے جا رہے تھے۔'

یہ بھی پڑھیے

امریکہ نے ابوغریب سے کیا سیکھا؟

بھاگتے تارکین وطن کو گرانے والی کیمرہ خاتون کو سزا

سابق امریکی حسیناؤں کے بارے میں نازیبا ای میلز پر استعفیٰ

پولیس چیف کوویل نے کہا کہ اس شخص کا نفسیاتی علاج کرنے کے بعد اسے رہا کر دیا گیا۔ تاہم ان کے مطابق ابھی واقعے کی تحقیقات جاری ہیں۔

اس عمل کو 'اپ سکرٹنگ' کہا جاتا ہے اور اس کے دوران خواتین کی اجازت اور علم کے بغیر ان کی سکرٹ کے نیچے سے تصاویر لی جاتی ہیں۔

یہ عمل سنہ 2015 کے بعد سے وسکانسن کے قوانین کے مطابق جرم تصور کیا جاتا ہے۔

اس کی زیادہ سے زیادہ سزا ساڑھے تین سال قید اور دس ہزار ڈالر جرمانہ ہے۔

اسی بارے میں