20 سال تک وقت جیسے تھم سا گیا ہو

فرنیچر
،تصویر کا کیپشن

یہ فرنیچر دو دہائی قبل ایتھوپیا میں ایریٹریا کے آخری سفیر نے استعمال کیا تھا

ایتھوپیا کے دارالحکومت ادیس ابابا میں ایریٹریا نے سنہ 1998 میں دونوں ممالک کے درمیان جنگ پر اپنا سفارتخانہ بند کر دیا تھا۔ 1998 کے بعد 2018 میں جب ایریٹریا نے اپنے سفارتخانے کے دروازے کھولے تو وہاں دھول مٹی میں لپٹا فرنیچر، گاڑیاں اور یہاں تک کہ بیئر کی بوتلیں ویسی ہت پڑی تھیں جیسی چھوڑ کر گئے تھے۔

دونوں ممالک کے درمیان سنہ 2000 میں تنازع ختم ہونے کے بعد حال ہی میں دونوں ملکوں کے درمیان سفارتی تعلقات کی بحالی پر اتفاق ہوا ہے۔ سفارتخانے کو کھولنا اسی سلسلے کی کڑی ہے۔

یہ تصاویر بی بی سی کی جانب سے سفارتخانے کے اندر سے بنائی گئی ہیں۔

،تصویر کا کیپشن

ان گاڑیوں کو ادیس ابابا میں سفارتخانے کی عمارت میں ہی رکھا گیا تھا

،تصویر کا کیپشن

وائن، بیئر اور زیتون کے تیل کی یہ بوتلیں ایک کریٹ میں پڑی ملیں

،تصویر کا کیپشن

صدر اسائس افوارکی نے سفارتخانے میں اپنے میزبان وزیراعظم ابیے احمد کے ہمراہ 20 سالوں میں پہلی مرتبہ ایریٹریا کا پرچم بلند کیا۔۔۔۔

،تصویر کا کیپشن

۔۔۔۔(بائیں جانب) صدر اسائس اور (دائیں جانب) وزیراعظم ابیے احمد نے جب سفارتخانے کی عمارت کو دورہ کیا تو ان کے ہمراہ صحافی بھی موجود تھے

،تصویر کا کیپشن

سٹاف اور عمارت کی مرمت کرنے والوں کا کہنا ہے کہ وہ یہ تو نہیں جانتے کہ ان تصاویر میں کون لوگ ہیں لیکن ان کے خیال میں یہ سابق سفارتی اہلکاروں کے رشتہ دار ہوں گے

،تصویر کا کیپشن

ایک سرکاری تقریب کے دوران ایتھوپیا کے وزیراعظم ابیے نے سفارتخانے کی چابیاں ایریٹریا کے صدر کے حوالے کیں

،تصویر کا کیپشن

اس موقع پر دونوں سربراہان کا بینڈ کے ساتھ استقبال کیا گیا، ایریٹریا کا سفارتخانہ دوبارہ سے کھولا جانا ایتھوپیا کے اپنے ہمسایہ ممالک کے ساتھ ایک بار پھر سے تعلقات استوار کرنے کی ایک کڑی ہے

تمام تصاویر کے جملہ حقوق محفوظ ہیں