فرعونوں کے زمانے کے تابوت سے آفت نکلنے کی افواہ مصر بھر میں پھیل گئی

مصری تابوت تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption بطلیموس کے زمانے کے اس تابوت کا وزن 27 ٹن ہے

دو ہفتے پہلے مصر میں ماہرینِ آثارِ قدیمہ نے اسکندریہ سے سنگِ سیاہ سے تراشا گیا ایک بہت بڑا تابوت کھود نکالا تھا جس کی عمر کا تخمینہ دو ہزار سال لگایا گیا تھا۔

اس کے ساتھ ہی ملک بھر میں ایک افواہ جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی۔

کیا اس تابوت کے اندر کوئی خوفناک بلا چھپی ہے جو نکل کر سارے ملک یا پھر ساری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے لے گی؟

دو ہزار سال پرانے تابوت سے کیا نکلا؟

جن ماہرین نے اسے کھولا ہے وہ کہتے ہیں کہ ایسی کوئی بات نہیں ہے۔ اس کی بجائے تابوت سے تین ڈھانچے برآمد ہوئے اور ساتھ ہی ایک ناقابلِ برداشت بدبو۔

مصر کے محکمۂ آثارِ قدیمہ نے تابوت کشائی کے لیے ماہرین کی ایک کمیٹی مقرر کی تھی۔

مصری اخبار الوطن کے مطابق انھوں نے تابوت کا ڈھکن دو انچ بھی نہیں اٹھایا تھا کہ تیز بدبو نے انھیں وہاں سے فرار ہونے پر مجبور کر دیا۔

بعد میں تابوت کھولنے کے لیے فوج کی خدمات حاصل کی گئیں اور فوجی انجینیئروں نے تابوت کا بھاری ڈھکن اٹھایا۔

محکمۂ آثارِ قدیمہ کے سیکریٹری جنرل مصطفیٰ وزیری نے کہا: 'تابوت کے اندر سے تین لوگوں کی ہڈیاں نکلیں، یہ بظاہر ایک خاندان کی مشترکہ تدفین لگتی ہے۔ بدقسمتی سے ممیاں اچھی حالت میں نہیں ہیں اور صرف ان کی ہڈیاں بچی ہیں۔'

میڈیا میں آنے والے خدشات کے بارے میں کہ تابوت کھولنے سے فرعونوں کے زمانے کی کوئی آفت پھیل جائے گی، انھوں نے کہا کہ 'ہم نے اسے کھول لیا ہے، اور الحمدللہ دنیا ابھی تک اندھیروں میں نہیں ڈوبی۔

'سب سے پہلے میں نے اپنا سر تابوت کے اندر داخل کیا تھا اور اب میں آپ کے سامنے صحیح سلامت کھڑا ہوں۔'

تصویر کے کاپی رائٹ AFP/GETTY IMAGES
Image caption تابوت سے تین آدمیوں کی ہڈیاں نکلیں جو بظاہر سپاہی ہیں

اس کے باوجود تابوت کھولتے وقت علاقے کو لوگوں سے خالی کروا لیا گیا تھا۔ کسی آفت کے ڈر سے نہیں، بلکہ اس خدشے کے پیشِ نظر کہ تابوت میں کوئی خطرناک گیس نہ ہو۔

ماہرین نے کہا ہے کہ تابوت کے اندر موجود تین افراد بظاہر فرعونوں کے زمانے کے فوجی لگتے ہیں۔

ان میں سے ایک کی کھوپڑی میں تیر کی چوٹ کا نشان ہے۔

یہ تابوت ساڑھے چھ فٹ لمبا ہے اور اب تک مصر میں سے نکلنے والے تابوتوں میں سب سے لمبا ہے، جب کہ اس کا وزن 27 ٹن ہے۔

یہ تابوت بطلیموس کے زمانے کا ہے، جو 323 قبل مسیح میں سکندر اعظم کی موت کے بعد شروع ہوا تھا۔

اب ماہرین اس کے اندر موجود ہڈیوں پر تحقیق کر کے یہ جاننے کی کوشش کریں گے کہ یہ کون لوگ تھے، کس حال میں زندہ رہے اور کیسے مرے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں