کرسمس پر ٹرمپ سے بات کرنے والی امریکی لڑکی کو ’اب بھی سانٹا میں یقین ہے‘

ٹرمپ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption امریکی صدر ٹرمپ اور ان کی اہلیہ ملانیا ٹرمپ نے کرسمس سے پچھلی شام بچوں کی کالز کے جواب دیے

کرسمس سے قبل کی شام امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جس سات سالہ لڑکی کے ساتھ ٹیلفون پر ہونے والی گفتگو وائرل ہوئی تھی اس لڑکی کا کہنا ہے کہ وہ اس کے بعد بھی سانٹا کلوز کے وجود پر یقین رکھتی ہیں۔

صدر ٹرمپ نے فون پر کولمین لائڈ سے بات کرتے ہوئے سانٹا کے وجود پر شک و شبے کا اظہار کیا تھا اور پوچھا تھا کہ آیا وہ اب بھی فادر کرسمس یا سانٹا کلوز میں یقین رکھتی ہے۔

لڑکی کی عمر جاننے کے بعد صدر نے کہا تھا: 'سات سال کی عمر میں ایسا کم ہی ہوتا ہے، ہے ناں؟'

اس لڑکی نے جواب میں 'یس سر' کہہ کر حامی بھری تھی۔ لیکن بعد میں پوسٹ اینڈ کوریئر کی رپورٹ کے مطابق اس نے اعتراف کیا کہ و وہ ان الفاظ کے مفہوم سمجھ نہیں سکی تھی۔

جنوبی کیرولینا میں لیزنگٹن کی رہائیشی کولمین نے اخبار کو یہ بھی بتایا کہ اس بات سے وہ بہت خوش ہیں کہ ان کی صدر سے بات ہوئی۔

صدر ٹرمپ کی ذہانت پر مزید مضامین

’سمارٹ نہیں جینیئس ہوں‘

ڈونلڈ ٹرمپ کا آئی کیو کتنا ہے؟

ٹلرسن کا امریکی صدر ٹرمپ کی ذہنی صحت کا دفاع

'یہ بہت اچھا تھا' یعنی 'واو' تھا 'میں دنگ رہ گئی۔۔۔ یہ اس طرح (اعصاب شکن) نہیں تھا۔ مجھے بس یہ سوچنا تھا کہ سچ کیا ہے۔'

کولمین نے بتایا کہ صدر ٹرمپ سے بات کرنے کے بعد وہ اور ان کے گھر والوں نے سانٹا کے لیے برف والی شکر، بسکٹ اور چاکلیٹ چھوڑ دی۔

اور صبح کو دیکھا تو کرسمس کے درخت کے نیچے وہ چیزیں نہیں تھیں اور اس کی جگہ ایک تحفہ رکھا تھا جس پر کولمین کا نام لکھا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA

در اصل کرسمس سے قبل والی شام صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور ان کی اہلیہ ملانیا دو دیو قامت کرسمس کے سجے درختوں کے پاس بیٹھے امریکی بچوں کی فون کالز کا جواب دے رہے تھے۔

تمام بچوں نے اس امید پر فون کیا تھا کہ وہ نوراڈ کی نظر میں آ جائیں گے۔ نوراڈ حکومت کی ایک ایجنسی ہے جو کرسمس کے موقعے پر دنیا بھر میں سانتا کی نقل و حرکت پر نظر رکھتا ہے (جزوی طور پر حکومت کی بندش کے باوجود یہ ایجنسی اب بھی اپنا کام کر رہی ہے)۔

بعض کال کرنے والوں کی کالز کا جواب صدر ٹرمپ اور ان کی اہلیہ نے دیا اور جواب میں صدر نے جو کچھ کہا وہ ہم تک پہنچانے کے لیے رپورٹر کیون ڈیاز کا شکرگزار ہونا چاہیے۔

ڈیاز نے گفتگو کو اس طرح ہم تک پہنچایا:

ٹرمپ نے (گرجدار آواز میں) کول مین نامی ایک بچے سے کہا: 'ہیلو، کیا کول مین بول رہے ہیں۔ میری کرسمس۔ آپ کتنے سال کے ہیں؟۔۔۔ آپ سکول میں اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے ہیں؟ کیا آپ اب بھی سانٹا میں یقین رکھتے ہیں؟'

سوشل میڈیا پر اس گفتگو کی جو ویڈیو گردش کر رہی ہے اس میں صدر ٹرمپ بچے سے یہ کہتے سنے جا سکتے ہیں: 'کیونکہ سات سال کی عمر میں اس کی امید کم ہی ہوتی ہے، ٹھیک ہے ناں؟

کولمین کا جواب واضح نہیں ہے اور یہ بھی واضح نہیں کہ ٹرمپ نے یہ خاص سوال کیوں کیا کیونکہ سانٹا کا وجود تو یقیناً غیر متنازع ہے۔

اگر آپ کو کوئی شکوک ہیں تو یہ تصاویر دیکھیے جو گذشتہ چند گھنٹوں میں لی گئی ہیں اور سینٹا کلوز کے وجود کے واضح شواہد فراہم کرتی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اور یہ میکسیکو کے سیوداد جوارز میں سانتا کی موجودگی ہے

باقی فون کالز بغیر کسی عجیب و غریب واقعے کے گزر گئیں، جس میں ٹرمپ اور ان کی اہلیہ نے فون کرنے والوں سے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔

گفتگو کے اختتام پر صدر کو مسکراتے دیکھا گیا تھا۔ کولمین کے والدین نے بعد میں کہا کہ جس طرح صدر ٹرمپ نے ان کی بیٹی سے بات کیا اس پر انھیں کوئی اعتراض نہیں ہے اور بلاوجہ ان کی بات کو سیاسی رنگ دیا جا رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption ۔۔۔ اور یہ ڈزنی لینڈ میں
تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ۔۔۔ اور یہاں سانتا فن لینڈ میں نظر آ رہے ہیں

ایک فون کرنے والے کو ملانیا نے کہا: 'ہم چاہتے ہیں کہ آپ کی امیدیں بر آئیں۔'

اسی بارے میں