زوزانا کاپوتووا سلواکیا کی پہلی خاتون صدر کیسے بنیں؟

سلواکیا تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption زوزانا کاپوتووا نے اپنی انتخابی مہم کو اچھائی اور برائی کے درمیان جدوجہد قرار دیا تھا

بدعنوانی کے خلاف مہم کو بنیاد بنا کر انتخابات میں حصہ لینے والی زوزانا کاپوتووا نے سلواکیا کا صدارتی الیکشن جیت کر ملک کی پہلی خاتون صدر ہونے کا اعزاز حاصل کر لیا ہے۔

اگرچہ زوزانا کاپوتووا کا سیاسی تجربہ نہیں ہے لیکن اس کے باوجود انھوں نے صدارتی الیکشن میں حکومتی پارٹی کے نامزد امیدوار اور اعلیٰ پائے کے سفارت کار ماروس سیفکووک کو انتخاب کے دوسرے مرحلے میں شکست دی۔

انھوں نے اپنی انتخابی مہم کو اچھائی اور برائی کے درمیان جدوجہد قرار دیا تھا۔

یہ بھی پڑھیے

سعودی عرب کا امریکی سفیر کے طور پر پہلی خاتون کا انتخاب

پاکستان: ہائی کورٹ میں پہلی خاتون چیف جسٹس

انڈیا کی پہلی خاتون لڑاکا پائلٹ

گزشتہ برس ایک تحقیقاتی رپورٹنگ کرنے والے ایک صحافی کا قتل ہوا تھا۔

جان کیوکییک نامی صحافی سیاستدانوں اور منظم جرائم کے درمیان رابطوں پر تحقیق کر رہے تھے۔ ان کو فروری 2018 میں اس وقت قتل کیا گیا جب وہ اپنی منگیتر کے ساتھ تھے۔

زوزانا کاپوتووا نے صحافی کے قتل کو اپنے صدارتی الیکشن لڑنے کے فیصلے کی ایک وجہ بتایا تھا۔ سلواکیا میں صدر کا عہدہ رسمی نوعیت کا ہوتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

تقریباً تمام ووٹوں کی گنتی مکمل ہو چکی ہے اور زوزانا کو 58 فیصد جبکہ ان کے حریف امیدوار کو 42 فیصد ووٹ ملے۔

زوزانا کاپوتووا کون ہیں؟

انھیں وکالت کے شعبے میں اس وقت شہرت حاصل ہوئی جب انھوں نے ایک غیر قانونی کوڑا پھینکنے کی جگہ کا کیس لڑا۔ یہ کیس 14 سال تک جاری رہا۔

وہ طلاق یافتہ اور دو بچوں کی والدہ ہیں۔ ان کا تعلق لبرل پراگریسیو سلواکیا پارٹی سے ہے جس کی پارلیمان میں کوئی نمائندگی نہیں ہے۔

سلواکیا میں ہم جنس پرستوں کی شادی قانونی حیثیت حاصل نہیں ہے تاہم زوزانا اس حوالے سے بنیادی حقوق کا پرچار کرتی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption زوزانا کاپوتووا نے صدارتی الیکشن میں حکومتی پارٹی کے نامزد امیدوار ماروس سیفکووک کو شکست سے دی ہے

زوزانا کاپوتووا نے کسے شکست دی ہے؟

انھیں حکومتی جماعت کی نامزدگی حاصل تھی۔ حکومتی پارٹی کے سربراہ رابرٹ فیسو ہیں جنھیں صحافی کے قتل کے بعد وزارت عطمیٰ کے عہدے سے استعفیٰ دینا پڑا تھا۔

انتخاب کے پہلے مرحلے میں زوزانا نے 40 فیصد جبکہ ان کے حریف نے 19 فیصد سے بھی کم ووٹ لیے تھے۔

اسی بارے میں