فلوریڈا: لینڈنگ کے دوران طیارہ دریا میں جا گرا

بوئنگ 737 تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption حکام کے مطابق حادثے میں 21 مسافروں کو معمولی چوٹیں آئی ہیں جنھیں طبی امداد کے لیے مقامی ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے

امریکی ریاست فلوریڈا میں ایک مسافر طیارہ آندھی اور طوفانی بارش کے باعث لینڈنگ کے دوران رن وے سے پھسل کر دریا میں جا گرا۔

حکام کے مطابق 21 مسافروں کو معمولی چوٹیں آئی ہیں جنھیں طبی امداد کے لیے مقامی ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔

جیکسنول میں مئیر لینی کری نے حادثے کے بعد ایک ٹویٹ میں کہا ہے کہ ’کوئی ہلاکت رپورٹ نہیں ہوئی اور اس موقع پر ہم سب اکٹھے ہیں۔‘

میامی ایئر انٹرنیشنل کے چارٹرڈ بوئنگ 737 طیارے نے کیوبا میں گوانتاموبے سے اڑان بھری تھی اور اس کی منزل جیکسنول شہر میں واقع ایک فوجی فضائی اڈہ تھی۔

طیارے پر 136 مسافروں کے علاوہ عملے کے سات ارکان سوار تھے جنھوں نے حادثے کے بعد جہاز کے پروں سے ہنگامی اخراج کیا۔

یہ بھی پڑھیے

بوئنگ طیاروں کی فیکٹری، حیرتوں کی انتہا

بوئنگ 737 میکس طیارے دنیا بھر میں گراؤنڈ

ہوائی سفر کرنے کے خوف سے کیسے نمٹا جائے؟

مسافروں کے مطابق طیارے نے طوفانی موسم میں مشکل لینڈنگ کی اور رن وے سے گھسٹ کر قریبی سینٹ جانز دریا میں جا گرا۔

کم از کم بیس افراد کو معمولی چوٹیں لگنے پر طبی امداد دی گئی۔

مسافر شیرل بورنمین نے سی این این ٹی وی نیٹ ورک کو اس ’ڈرا دینے والے‘ لمحے کے بارے میں بتایا کہ 'طیارہ زمین سے ٹکرایا اور ہوا میں واپس اچھلا۔ یہ واضح تھا کہ پائلٹ کو طیارے پر مکمل کنٹرول حاصل نہیں تھا، طیارہ دوبارہ جھٹکا کھا کر اُٹھا۔'

انہوں نے مزید کہا کہ 'ہم پانی میں تھے۔ ہمیں یہ نہیں پتہ تھا کہ ہم کہاں ہیں، آیا ہم دریا میں ہیں کہ سمندر میں۔' انہوں نے یہ بھی بتایا کہ انہیں طیارے سے ایندھن کے دریا میں گرنے کی وجہ سے اس کی بو بھی آرہی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption طیارے میں 136 مسافروں کے علاوہ عملے کے سات ارکان سوار تھے مگر حادثے میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا

جیکسنول کے مئیر کے مطابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ہر طرح کی معاونت کی پیش کش بھی کی ہے۔

جیکسنول میں نیول ایئر سٹیشن چیف نے فیس بک پیغام میں کہا ہے کہ حفاظت کے خدشات کے پیشِ نظر جہاز میں سوار مسافروں کے پالتو جانوروں کو ابھی تک طیارے سے نہیں نکالا جا سکا ہے۔

’اس مشکل گھڑی میں ہماری دعائیں پالتو جانوروں کے مالکان کے ساتھ ہیں۔‘

بعد ازاں ایک نیوز کانفرنس میں نیول ایئر سٹیشن جیکسنول کیپٹن مائیکل کونر کا کہنا تھا کہ یہ ایک ’معجزہ‘ تھا کہ اس حادثے میں کوئی ہلاکت یا کسی کو شدید نوعیت کی چوٹ نہیں آئی۔

حکام کا کہنا ہے کہ طیارے میں فوجی اور سویلین سوار تھے۔ بوئنگ نے ایک اعلامیے میں مسافروں کے لیے ’نیک خواہشات‘ کا اظہار کیا ہے۔

اسی بارے میں