گرمپی کیٹ: انٹرنیٹ کی مقبول ’ناراض بلی‘ چل بسی

گریمپی کیٹ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption اِس کی موت پیشاب کی نالی کے انفیکشن اور اس میں پیش آنے والی پیچیدگیوں کی وجہ سے ہوئی

انٹرنیٹ پر اپنے ناراض تیور کی وجہ سے معروف ’گرمپی کیٹ‘ یا ناراض بلی کی مالکن کے مطابق منگل کے روز صرف سات سال کی عمر میں ان کی پالتو بلی چل بسی۔

گرمپی کیٹ کے ٹوئٹر اکاؤنٹ کے مطابق اِس کی موت پیشاب کی نالی کے انفیکشن اور اس میں پیش آنے والی پیچیدگیوں کی وجہ سے ہوئی۔

امریکی ریاست ایریزونا سے تعلق رکھنے والی ناراض بلی نے دنیا بھر میں ’لاکھوں لوگوں کو ہنسایا۔‘

یہ بھی پڑھیے

نیوزی لینڈ کی ’بلیِ اوّل‘

’بلی مارنے پر چڑیا گھر صاف کریں‘

70 ہزار کے بلّے کی گمشدگی آوارہ بلی کے سر

ناراض بلی کا اصل نام ٹارڈار ساس تھا۔ سنہ 2012 میں اس بلی کی چند تصاویر نے انٹرنیٹ پر مقبولیت حاصل کی تھی جس کے بعد دنیا بھر میں اس کی تصاویر میمز پھیل گئیں۔

ناراض بلی کی مالکن ٹیبیتھا بنڈسن کے مطابق چہرے پر غصے والے تاثرات کی وجہ اس کے پست قد کی نسل اور دانتوں کی مخصوص بناوٹ تھی۔

گرمپی کیٹ نے نہ صرف پوری دنیا گھومی بلکہ مختلف ٹی وی شوز میں بھی شرکت کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption اس بلی کی شہرت کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ انسٹاگرام پر اِسے 20 لاکھ افراد فالو کرتے ہیں

سنہ 2014 میں ناراض بلی نے اپنی ذات پر بنائی گئی فلم میں بھی کام کیا جو کرسمس کے موقع پر ریلیز ہوئی اور اِس نے خوب شہرت حاصل کی۔

امریکی شہر سان فرانسسکو میں موجود مومی مجسموں کے لیے مشہور عجائب گھر مادام تساد نے 2015 میں ناراض بلی کا موم کا پتلا متعارف کرایا تھا۔

اس بلی کی شہرت کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ انسٹاگرام پر اِسے 20 لاکھ افراد فالو کرتے ہیں۔

گرمپی کیٹ کی موت کی خبر سننے پر ان کے مداحوں نے افسوس کا اظہار کیا اور اِن پر بننے والے ہزاروں میمز کو پھر سے شئیر کیا۔

مشہور کارٹون گارفیلڈ نے بھی انھیں اپنے سوشل میڈیا اکاؤنٹ کے ذریعے خراج تحسین پیش کیا۔

سنہ 2014 میں بنی ایک فلم میں امریکی اداکارہ اوبری پلازہ نے اس ناراض بلی کو اپنی آواز دی تھی۔ ایک بیان میں ان کا کہنا تھا کہ گرمپی کیٹ کی موت کی خبر سن کر ان کا ’دل ٹوٹ گیا ہے۔‘

سنہ 2018 میں ناراض بلی کے مالکان نے کاپی رائٹ سے متعلق ایک مقدمے میں 710000 ڈالر (یعنی 555000 پاونڈ) جیتے تھے۔

گرمپی کیٹ لیمٹڈ نے امریکی کافی کمپنی گرینیڈ کے خلاف ان کی تصویر استعمال کرنے پر مقدمہ دائر کیا تھا۔

گرمپی کیٹ اور گرینیڈ کے درمیان ہونے والے معاہدے کے مطابق یہ کمپنی ناراض بلی کی تصویر صرف اپنا مخصوص مشروب ’گرمپاچینو‘ بیچنے کے لیے استعمال کرسکتی تھی۔

مگر کمپنی نے معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے اپنی دوسری اشیا کی فروخت کے لیے بھی یہ تصویر استعمال کی۔

گرمپی کیٹ کی مالکن ٹیبیتھا بنڈسن اپنی پالتو بلی کی انٹرنیٹ پر مقبولیت سے قبل ایک ویٹر تھیں۔

برطانوی اخبار ایکسپرس کو دئیے گئے ایک انٹرویو میں انھوں نے بتایا کہ بلی کی سوشل میڈیا پر پہلی شرکت کے بعد ’میں نے اپنی نوکری چند ہی دنوں میں چھوڑ دی تھی۔‘

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں