فن لینڈ کے ساحل پر ہزاروں کی تعداد میں برف سے بنے ہوئے انڈے کدھر سے آئے؟

فن لینڈ تصویر کے کاپی رائٹ RISTO MATTILA

یورپی ملک فن لینڈ کے ایک جزیرے پر ایک نادر نوعیت کے موسمیاتی عمل کے نیتجے میں ہزاروں کی تعداد میں بن جانے والے 'برفیلے انڈوں' سے ساحل بھر گیا۔

فوٹوگرافر رسٹو مٹیلا ان افراد میں شامل تھے جنھوں نے فن لینڈ اور سویڈن کے درمیان پائے جانے والے ہیل یوٹو جزیرے پر 'برفیلے انڈے' دیکھے۔

موسمیات کے ماہرین کہتے ہیں ہیں کہ یہ عمل صرف اس وقت ہوتا ہے جب برف کے چھوٹے چھوٹے ٹکڑے ہوا اور پانی کی مدد سے لُڑکنا شروع ہو جائیں۔

یہ بھی پڑھیے

’پولر وورٹیکس‘ کے کچھ غیر معمولی اثرات

امریکہ میں سخت ترین سردی کی لہر، آٹھ افراد ہلاک

رسٹو مٹیلا نے بی بی سی کو بتایا کہ وہ قریبی شہر اولو کے رہنے والے ہیں اور انھوں نے اپنی ساری زندگی میں ایسا منظر نہیں دیکھا۔

'میں اپنے بیوی کے ساتھ مرجانیئمی ساحل پر تھے۔ موسم اچھا تھا، سورج نکلا ہوا تھا اور درجہ حرارت منفی ایک ڈگری سیلسئیس کے قریب تھا اور تیز ہوا چل رہی تھی۔'

رسٹو مٹیلا کے مطابق اس موقع پر انھوں نے وہ حیران کن منظر دیکھا۔

'ہمیں ساحل پر سمندر کے نزدیک برف کے بنے ہوئے انڈے نطر آئے۔ یہ زبردست منظر تھا۔ میں یہاں پر 25 سال سے رہائش پذیر ہوں اور آج تک ایسی کوئی چیز نہیں دیکھی۔ مگر اتفاق سے میرے پاس کیمرا تھا تو میں نے یہ تصویر محفوظ کر لی۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Risto matilla
Image caption رسٹو مٹیلا کی اہلیہ ’برف سے بنے انڈوں‘ پر بیٹھی ہوئی ہیں

اسی بارے میں