#LondonBridge حملہ: عثمان خان کے خاندان کی لندن برج واقعے کی مذمت

لندن برج دہشت گردی خنجر حملہ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption جیک میریٹ اور سیسکیا جونز کیمبرج یونیورسٹی سے فارغ التحصیل تھے اور دونوں سزا یافتہ مجرموں کی بحالی کے اصلاحی پروگرام کا حصہ تھے۔ یہ دونوں لندن برج کے خنجر کے حملے میں ہلاک ہوئے

لندن برج حملہ آور عثمان خان کے خاندان کا کہنا ہے کہ انھیں اس واقعے پر ’شدید غم اور صدمہ ہے‘ اور وہ ان کے اس اقدام کی ’پرزور مذمت‘ کرتے ہیں۔

ایک بیان میں انھوں نے متاثرین کے خاندانوں سے افسوس کا اظہار کیا۔

عثمان خان 2012 میں دہشت گردی کے الزام میں برطانیہ میں سزا یافتہ تھے۔

25 سالہ جیک میرٹ اور 23 سالہ سیسکیا جونز نے جمعہ کو قیدیوں کے بارے میں ایک پروگرام میں شرکت کی تھی۔ انھیں 28 سالہ عثمان خان نے چاقو سے حملہ کر کے ہلاک کر دیا۔

یہ بھی پڑھیے

لندن برج حملہ: جیک میرٹ میں ’زندگی جینے کی تمنا‘ تھی

لندن: حملہ آور کو دہشت گردی کے جرم میں سزا ہوئی تھی

لندن برج حملہ: چاقو بردار عثمان خان کون تھا؟

لندن کی میٹروپولیٹن پولیس کی جانب سے جاری ہونے والے بیان میں عثمان خان کے خاندان کا کہنا تھا کہ عثمان کی اس حرکت نے انھیں بہت دکھ اور صدمہ پہنچایا۔

بیان میں عثمان کے خاندان نے عوام اور میڈیا سے اپیل کی ہے کہ انھیں اس مشکل مرحلے میں پریشان نہ کیا جائے۔

حملے میں زخمی ہونے والے ایک اور شخص، جنھوں نے عثمان کا مقابلہ کرنے کی کوشش کی تھی، کہتے ہیں کہ وہ اب اس واقعے کی حقیقت کو قبول کرتے جا رہے ہیں۔

لوکاز فِش مونگرز ہال میں ملازمت کرتے ہیں جہاں عثمان نے اپنا حملہ شروع کیا تھا۔ لوکاز کے مطابق انھوں نے ’کچھ سوچے سمجھے بغیر‘ قریب پڑا ایک ڈنڈا اٹھایا کر حملہ آور کا مقابلہ کرنے کی کوشش کی۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں
لندن: پولیس نے حملہ آور کو گولی مار دی

'میرے بیٹے کی تصویر کو نفرت کے لیے استعمال مت کرو'

جیک میرِیٹ کے والد ڈیوڈ میرِیٹ کہتے ہیں کہ ان کا بیٹا سخت سزاؤں کے قانون کے خلاف تھا۔

سماجی رابطوں کی ویب سائیٹ ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں جیک کے والد ڈیوڈ میرِٹ نے اُن برطانوی اخبارات پر کڑی تنقید کی ہے جو مجرموں کو اپنی سزائیں مکمل کرنے تک جیل میں رکھنے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

'اپنے ناپاک پراپیگینڈے کے لیے میرے بیٹے کی موت اور اُس کی اور اس کی ساتھی کی تصویروں کو مت استعمال کرو۔ جیک ہر اس بات کے خلاف تھا جس کی تم نمائندگی کرتے ہو یعنی نفرت، معاشرتی تقسیم، جہالت۔'

قاتل جس کی شناخت پولیس نے اٹھائیس برس کے عثمان خان کے نام سے کی، دہشت گردی کے واقعے میں ملوث ہونے کی وجہ سے سزا کاٹ رہا تھا۔ اسے گزشتہ برس دسمبر میں سزا یافتہ مجرموں کے ایک اصلاحی پروگرام کے تحت نصف سزا کاٹنے کے بعد رہا کیا گیا تھا۔

اس سے پہلے کے ایک ٹویٹ پیغام میں ڈیوڈ میرِٹ نے کہا تھا کہ ان کا بیٹا جیک 'کبھی بھی یہ نہیں چاہے گا کہ اس کی موت کو ظالمانہ سزائیں دینے یا قیدیوں کو غیر ضروری عرصے تک جیل میں رکھنے کے لیے ایک جواز کے طور پر استعمال کیا جائے۔'

تاہم اب یہ معاملہ برطانیہ کے عام انتخابات سے صرف دو ہفتے پہلے ایک موضوع بن گیا ہے۔ عام انتخابات 12 دسمبر کو ہو رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption تئیس برس کی سیسکیا جونز

حکمران جماعت کنزرویٹو پارٹی کے وزیر اعظم بورس جانسن نے بی بی سی کو دیے گئے ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ اس واقعے سے ثابت ہوتا ہے کہ ملک کو طویل سزائیں دینے کے قانون کی ضرورت ہے۔

انھوں نے حزب اختلاف کی جماعت لیبر پارٹی پر الزام عائد کیا کہ ان کی حکومت کے زمانے میں ایسے قوانین متعارف کرائے گئے تھے جن کی وجہ سے بقول ان کے عثمان خان جیسے مجرم جلد رہا ہو گئے تھے۔

بورس جانسن نے کہا تھا کہ 'میرے خیال میں اس شخص جیسے خطرناک افراد کو صرف آٹھ برس کی سزا کے بعد جیل سے رہا کردینا حماقت ہے، یہ ایک گھناؤنا عمل ہے۔'

بجٹ میں کٹوتیاں

دوسری جانب بورس جانسن اور ان کی کنزرویٹو پارٹی پر اس معاملے کو انتخابات میں نمبر بنانے کے لیے سیاسی رسہ کشی کا موضوع بنانے پر تنقید ہو رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption برطانوی وزیراعظم بورس جانسن اس واقعے کی ذمہ داری مجروموں کو جلد رہائی کے قوانین بتاتے ہیں جبکہ ان کے مخالف جیریمی کوربِن بجٹ میں کٹوتیوں کو لندن برج کے واقعے کی وجہ کہتے ہیں۔

اس دوران بورس جانسن کے مخالف امیدوار اور لیبر پارٹی کے سربراہ جیریمی کوربِن نے کہا ہے کہ سزا یافتہ دہشت گردوں کے لیے قید کی سزا کا پوری میعاد تک جیل میں رہنا ضروری نہیں ہے۔

انھوں نے اس واقعہ کی وجہ حکمران جماعت کی بجٹ میں کٹوتیوں کی پالیسی کو قرار دیا ہے جس کی وجہ سے جیلوں سے عارضی رہائی، ذہنی بیماری کے علاج کے محکموں اور نوجوانوں کے لیے خدمات سرانجام دینے والے اداروں میں مالیاتی وسائل کی کمی ہو گئی ہے۔

جیریمی کوربِن نے مزید کہا کہ عراق کی جنگ اور اس قسم کی دوسری برطانوی پالیسیوں کی وجہ سے دہشت گردی کے رجحانات میں اضافہ ہوا ہے۔

لیبر پارٹی کے رہنما جیریمی کوربِن نے کہا کہ 'حقیقی سیکیورٹی صرف سخت قوانین اور بہترین انٹیلیجنس کی وجہ سے نہیں حاصل کی جاسکتی ہے، بلکہ یہ موثر قسم کی عوامی خدمات کے لیے مالیاتی وسائل مہیا کیے جانے کی وجہ سے آتی ہے۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption لندن برج کے واقعے کی زندگی کے ہر شعبہ کے لوگوں نے مذمت کی ہے۔

جیک میرِٹ کے والد ڈیوڈ میرِٹ نے ٹویٹر پیغامات کے تبادلوں کے دوران یہ بھی کہا ہے کہ 'اصل مسئلہ نگرانی کے کام میں کمی اور رہائی کے بعد کے بحالی کے عمل میں کمی ہے، نہ کہ کم عرصے کی قید کی سزاؤں میں ہے۔'

'ان خدمات میں وسائل نہ ہونے کے برابر ہیں جس کے نتیجے میں ہم اب اور زیادہ غیر محفوظ ہیں۔'

لندن برج پر جمعے کے روز ہونے والے حملے میں تین اور افراد زخمی ہوئے تھے۔ ایک کو علاج کے بعد گھر جانے کی اجازت دے دی گئی ہے جبکہ دوسرے دو افراد کی حالت بہتر ہے اور وہ اب بھی زیرِ علاج ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں