آخری وقت اشاعت:  منگل 30 مارچ 2010 ,‭ 03:09 GMT 08:09 PST

’مجرموں کو کھوج نکالیں گے‘

اس مواد کو دیکھنے/سننے کے لیے جاوا سکرپٹ آن اور تازہ ترین فلیش پلیئر نصب ہونا چاہئیے

ونڈوز میڈیا یا ریئل پلیئر میں دیکھیں/سنیں

روس کے دارالحکومت ماسکو میں دو زیر زمین ٹرین سٹیشنوں پر دو خود کش دھماکوں کے بعد روسی رہنماؤں نے کہا ہے کہ ان حملوں کے پیچھے جو بھی ہے اس کو تباہ کردیا جائے گا۔

سوموار کے روز ماسکو میں دو زیر زمین ٹرین سٹیشنوں پر دو خود کش دھماکوں میں کم از کم اڑتیس افراد ہلاک اور درجنوں زخمی ہو گئے تھے۔

روسی صدر دیمیتری نے دھماکے والی جگہوں پر پھول کی چادر چڑھائی اور حملے کی منصوبہ بندی کرنے والوں کو ’جانور‘ کہا۔ ’ہم ان کو ڈھونڈ نکالیں گے اور تباہ و برباد کردیں گے۔‘

اس مواد کو دیکھنے/سننے کے لیے جاوا سکرپٹ آن اور تازہ ترین فلیش پلیئر نصب ہونا چاہئیے

ونڈوز میڈیا یا ریئل پلیئر میں دیکھیں/سنیں

اس سے قبل روسی وزیر اعظم پیوٹن نے کہا تھا کہ وہ ان حملوں کے ذمہ دار افراد کو کھوج نکالیں گے اور ان کا قلع قمع کردیں گے۔

یاد رہے کہ روس کی پولیس نے کہا ہے کہ دو خواتین خود کش بمباروں نے صبح کی بھییڑ کے دوران خود کو دھماکے سے اڑا لیا جس میں کم از کم اڑتیس افراد ہلاک ہو گئے۔

پہلا دھماکہ ماسکو کے زیر زمین سٹیشن لبی آنکا میں ہوا جس میں پچیس افراد ہلاک اور پندرہ زخمی ہوئے۔ روس کے خفیہ ادارے فیڈرل سکیورٹی سروس کا دفتر لبی آنکا سٹیشن کے اوپر واقع ہے۔ دوسرا دھماکہ چالیس منٹ بعد پارک کلٹری سٹیشن میں ہوا جس میں بارہ افراد ہلاک ہوگئے۔

روس کی ہنگامی حالات کی منسٹری کی ترجمان نے بتایا کہ لبی آنکا سٹیشن پر پہلا دھماکہ مقامی وقت کے مطابق آٹھ بجے کے قریب ہو ا جب کہ دوسرا دھماکہ چالیس منٹ کے بعد ہوا۔

روس کی زیر زمین ٹرین کا جال انتہائی وسیع ہے جہاں روزانہ پچپن لاکھ افراد سفر کرتے ہیں۔ ابھی تک کسی نے دھماکے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔

روس کے خفیہ ادارے ایف ایس بی نے اشارہ کیا ہے کہ ان دھماکوں کے پیچھے چیچنیا اور انگشٹیا میں سرگرم مزاحمتی گروہ ملوث ہو سکتے ہیں۔

  • ماسکو دھماکے
  • ماسکو
  • ماسکو میئر
    ماسکو کے میئر کے مطابق خود کش حملہ آور خواتین تھیں
  • سابقہ کے جی بی اور موجودہ ایف ایس بی کا دفتر لبی آنکا سٹیشن کے اوپر واقع ہے
  • امدادی کاروائیاں شروع کر دی گئی ہیں

دسمبر دوہزار نو میں ماسکو سے سینٹ پیٹرز برگ جانے والےٹرین کے حادثے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے چیچنا میں سرگرم ’مجاہدین کوقاف‘ نامی تنظیم کے سربراہ ڈاکو عمروف نے دھمکی دی تھی کہ مزید ایسی کارروائیاں ہوں گی۔

ماسکو کے میئریوری لزکوو نے کہاہے کہ دو خواتین دہشتگردوں نے زیر زمین سٹیشنوں پر حملے کیے ہیں۔

ماسکو میں بی بی سی کی نامہ نگار رچرڈ گالپن نے بتایاہے کہ ماضی میں ہونے والے دہشتگردی کے حملوں کا الزام چیچنیا کی آزادی کے لڑنے والے اسلامی گروہوں پر عائد کی جاتا رہا ہے۔

روس نے حالیہ مہینوں میں دہشتگرد گروہوں کے خلاف کامیاب کاروائیوں کا دعویٰ کیا تھا۔ روس نے فروری میں کہا تھا کہ اس کے قانون نافذ کرنے والے اداروں نے بیس دہشتگردوں کو ہلاک کر دیا ہے۔

روس کی ایمرجنسی سروس کی ترجمان نے کہا کہ دھماکے سے سٹیشن میں آگ نہیں بھڑکی ہے۔ انٹرنیٹ پر چلائی جانے والی ویڈیو کے مطابق سٹیشن پر لاشیں بکھری پڑی ہیں اور ایمرجنسی سروسز زخمیوں کو طبی امداد مہیا کر رہی ہیں۔

[an error occurred while processing this directive]

BBC navigation

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔