ایران پر پابندیاں جلد لگیں: اوباما

امریکہ اور فرانس نے کہا ہے کہ ایران کے خلاف اس کے ایٹمی پروگرام کے حوالے سے پابندیاں لگانے کی مشترکہ کوشش کی جائے گی۔

یہ بات امریکی صدر براک اوباما نے فرنسیسی صدر نکولس سرکوزی سے ملاقات کے بعد کہی۔

براک اوباما نے کہا کہ ان کو امید ہے کہ ایران پر پابندیاں کچھ ہی ہفتوں میں لگ جائیں گی۔ ’مسٹر سرکوزی نے یقین دلایا ہے کہ پوری کوشش کی جائے گی کہ یورپ ایران پر پابندیوں کے حق میں ہو۔‘

اوباما اور سرکوزی کی مشترکہ پریس کانفرنس میں امریکی صدر نے کہا وہ پابندیوں لگانے کے لیے مہینوں انتظار کے حق میں نہیں ہیں۔

فرانسیسی صدر سرکوزی نے کہا کہ ایران کو ایٹمی پروگرام مکمل کرنے نہیں دیا جاسکتا۔ ’فیصلہ کرنے کا وقت آ گیا ہے۔‘

انہوں نے کہا کہ وہ برطانوی وزیر اعظم گورڈن براؤن اور جرمنی کی چانسلر ایجیلا مرکل کے ساتھ مل کر ان پابندیوں کے لیے یورپی حمایت کے لیے کام کریں گے۔

واضح رہے کہ ایران کا ہمشیہ سے یہ موقف رہا ہے کہ اس کا جوہری پروگرم سول مقاصد کے لیے ہے۔ تاہم مغربی ملکوں میں پائے جانے والے خدشات کے مطابق اس سطح کا یورینیم حاصل کرنے کے بعد ایران جوہری ہتھیار بنانے کی صلاحیت سے چند قدم کے فاصلے پر رہ جائے گا اور اس مواد سے صرف چھ ماہ کے اندر ہتھیاروں کے لیے مطلوبہ جوہری ایندھن بنایا جا سکتا ہے۔

.

اسی بارے میں