جرمنی: یونان کی مالی امداد کا بل منظور

جرمنی کی پارلیمنٹ نے یونان کے مالی بحران کو حل کرنے لیے بائیس اعشاریہ دو بلین یورو کی امداد دینے کی منظوری دی ہے۔

فائل فوٹو
Image caption جرمنی کی چانسلر اینگلا مرکل نے یونان کے امدادی پیکج کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ اس بحران کے باعث یورپی یونین کے وجود کو خطرہ ہے

پارلیمنٹ نے اس بل کی منظوری گرما گرم بحث کے بعد دی جس کے دوران جرمنی کی چانسلر اینگلا مرکل کو حزب اختلاف کی جانب سے شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑا۔

اس بل کے حق میں تین سو نوے ووٹ ڈالے گئے جب کہ مخالفت میں بہتر ووٹ پڑے اور ایک سو انتالیس ممبران نے رائے شماری میں حصہ نہیں لیا۔

جرمن پارلیمنٹ کا ایوان بالا ’ بندرست‘ اب اس بل پر ووٹنگ کرے گا اور اگر یہ بل پاس ہو گیا تو صدر کے دستخط کے بعد یہ قانون بن جائے گا۔

جرمنی کی چانسلر اینگلا مرکل نے یونان کے امدادی پیکج کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ اس بحران کے باعث یورپی یونین کے وجود کو خطرہ ہے۔اُن کا کہنا تھا ’اگر یورپی یونین کے ستائیس ممالک نے اس بحران کوحل کرنے کے لیے کوئی اقدام نہ کیا تو اس کا یہ مطلب ہو گا کہ ہم کچھ نہیں کر سکتے۔‘

برلن میں بی بی سی کے نامہ نگار کا کہنا ہے کہ جرمن پارلیمنٹ میں اس بل پر ہونے والی ووٹنگ کے دوران اینگلا مرکل کو شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑا۔اپوزیشن ممبران نے بحث کے دوران اینگلا مرکل پر اس مسئلے کو حل کرنے پر سست روی اختیار کرنے کا الزام عائد کیا۔

اسی بارے میں