نیٹو قافلے پر خودکش حملہ، اٹھارہ ہلاک

افغان پولیس کے مطابق دارالحکومت کابل کے مغربی علاقے میں نیٹو افواج کے قافلے پر خودکش حملے میں پانچ امریکی فوجیوں سمیت اٹھارہ افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

اس دھماکے میں باون افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔

پولیس حکام کے مطابق یہ ایک کار بم حملہ تھا اور یہ دارالامان چوک کے علاقے میں اس جگہ ہوا جہاں سرکاری دفاتر واقع ہیں۔ یہ رواں برس افغان دارالحکومت میں غیر ملکی فوج پر ہونے والا سب سے مہلک حملہ ہے۔

حکام نے خبر رساں ادارے رائٹرز کو بتایا ہے کہ ’ایساف کا کارواں وہاں سےگزر رہا تھا کہ خودکش حملہ آور نے انہیں نشانہ بنایا‘۔ اس حملے میں نیٹو افواج کی پانچ جبکہ عام شہریوں کی بارہ سے زائد گاڑیاں متاثر ہوئیں۔ دھماکے کا نشانہ بننے والی گاڑیوں میں ایک مسافر بس بھی شامل ہے۔

دھماکے بعد نیٹو فوج اور افغان پولیس نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا اور زخمیوں اور لاشوں کو ہسپتال منتقل کیا۔

امریکی فوج نے اپنے پانچ فوجیوں کی ہلاکت کی تصدیق کر دی ہے جبکہ ایساف کے ترجمان کا کہنا ہے کہ وہ اس واقعے کے بارے میں جانتے ہیں اور تحقیقات جاری ہیں۔

طالبان نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔ کابل میں سخت سکیورٹی کے باوجود حالیہ ماہ میں وہاں طالبان نے کئی بڑے حملے کیے ہیں اور نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ یہ تازہ حملہ اس بات کا ثبوت ہے کہ طالبان افغان دارالحکومت کے سخت حفاظتی حصار کو توڑنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

.

اسی بارے میں