چین اور امریکہ: تجارتی مذاکرات کا آغاز

چین اور امریکہ کے درمیان دو دن کی اعلی سطحی مذاکرات کا پیر کو بیژنگ میں آغاز ہوگیا ہے۔

ہلیری کلنٹن
Image caption وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن امریکی وفد کی سربراہ ہیں

دو روزہ مذاکرات کا مقصد آئندہ برسوں میں چین اور امریکہ کے اقتصادی اور سٹریٹیجک رشتوں کو بہتر بنانا ہے۔

امریکہ کے وزیر خزانہ ٹموتھی گیتھنر اور وزیر خارجہ ہلیری وفد کے ساتھ ان مذاکرات میں حصہ لینے کے لیے بینژنگ پہنچے ہیں۔

وزیر خزانہ ٹموتھی گیتھنر کا کہنا ہے کہ امریکہ اور چین کے درمیان تجارتی روکاوٹوں کو کم کرنے اور ایک متوازن معیشت کی ترقی کے لیے دونوں ملکوں کو مل کر کام کرنا ہوگا۔

اس موقع پر چین کے نائب وزیر اعظم وانگ قشان کا کہنا تھا کہ ان مذاکرات کا مقصد ایک مستحکم عالمی ترقی کو فروغ دینا ہے۔

بیژنگ میں بی بی سی کی نامہ نگار کا کہنا ہے کہ امریکہ اور چین کے درمیان کئی معاشی اختلافات ہیں جن پر اتفاق رائے اور بات چیت ہونی ہے۔

امریکہ چین کے ساتھ ’ٹریڈ ڈیفسِٹ‘یا درآمدات اور برآمدات کی شرح میں فرق پر ناراض ہے اور چین چاہتا ہے کہ امریکہ چین کی برآمدات پر عائد پابندی کو ہٹائے۔

مذاکرات کے آغاز پر چین نے زر مبادلہ کی اپنی پالیسی میں اصلاحات کا وعدہ کیا ہے۔

امریکہ کا کہنا ہے کہ چین کی کرنسی پالیسی اپنے اکسپورٹرز کی حامی ہے۔

ان مذاکرات کے دوارن جنوبی کوریا کے جنگی جہاز پر شمالی کوریا کی جانب سے مبینہ طور پر حملے اور اس کے بعد جنوبی اور شمالی کوریا کے رشتوں میں کشیدگی کے بارے میں بھی بات چیت ہونے کی توقع ہے۔

اسی بارے میں