افغانستان: کینیڈین جنرل برطرف

Image caption برگیڈیئر جنرل ڈینیل مینارڈ اپنے افسران بالا اپنے افسران کا اعتماد کھو چکے تھے: محکمہ دفاع

افغانستان میں کینیڈا کے فوجی دستے کے سربراہ برگیڈیئر جنرل ڈینیل مینارڈ کو ’نامناسب ذاتی تعلق‘ کی بنیاد پر اپنے عہدے سے ہٹا دیاگیا ہے۔

کینیڈا کے اٹھائیس سو فوجی افغانستان میں نیٹو افواج کا حصہ ہیں۔ فوجی افسر کو ہٹانے کی وجوہات نہیں بتائی گئی ہیں۔

کینیڈا کےمحکمہ دفاع نے کہا ہے کہ جنرل ڈینیل مینارڈ کو ’نامناسب ذاتی تعلق‘ کی وجہ سے ان کے عہدے سے برطرف کیا گیا ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ اس برطرفی سے افغانستان میں فوجی کارروائیوں پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔

برگیڈیئر جنرل ڈینیل مینارڈ افغانستان کےصوبے قندھار میں آپریشن کی تیاری کے لیے بنائی جانے والی ٹاسک فورس کی سربراہی کر رہے تھے۔

بیان میں کہاگیا ہے کہ برگیڈیئر جنرل ڈینیل مینارڈ اپنے افسران بالا اپنے افسران کا اعتماد کھو چکے تھے۔

کینیڈا کے ذرائع ابلاغ میں چھپنےوالی خبروں کےمطابق کہ برگیڈیئر جنرل ڈینیل مینارڈ نے قندھار ایئرفیلڈ پر فائرنگ کی تھی۔جنرل مینارڈ نے اپنے جرم کا اعتراف کر لیا ہے۔

کینیڈا کی وزارت دفاع نے کہا ہے کہ برگیڈیئر جنرل مینارڈ کی جگہ برگیڈئیر جنرل جان وانس سے کو تعینات کیا گیا ہے۔