کرغزستان: تازہ جھڑپیں، 37 ہلاک

وسط ایشیائی ریاست کرغزستان کے دوسرے بڑے شہر اوش میں پرتشدد جھڑپوں میں 37 افراد کی ہلاکت کے بعد ہنگامی حالت کا اعلان کرتے ہوئے کرفیو لگا دیا گیا ہے۔

جنوبی شہر اوش میں یہ جھڑپیں جمعرات کی رات شروع ہوئیں اور جمعہ کی صبح تک شہر کی گلیاں میدانِ جنگ کا منظر پیش کرتی رہیں۔

اطلاعات کے مطابق ان جھڑپوں میں دو سو سے زیادہ افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔ جھڑپوں کے بعد کرغز حکام نے اوش اور اس کے قریبی قصبوں میں کرفیو کے نفاذ کا اعلان کرتے ہوئے بکتربند گاڑیاں علاقے میں بھیج دی ہیں۔

چین اور روس نے ان جھڑپوں کے جلد از جلد خاتمے کی امید ظاہر کی ہے۔

خیال رہے کہ اوش شہر میں زیادہ تر ازبک افراد رہائش پذیر ہیں اور یہ سابق کرغز صدر قربان بیگ باقیوف کا مضبوط گڑھ ہے جنہیں رواں برس اپریل میں پرتشدد مظاہروں کے بعد اقتدار سے ہٹا دیا گیا تھا۔

ان مظاہروں کے دوران پچاسی افراد مارے گئے تھے جبکہ قربان باقیوف اپنے اہلِ خانہ کے ہمراہ ملک چھوڑ کر بیلاروس چلے گئے تھے۔

قربان باقیوف کی برطرفی کے بعد سے ملک میں عبوری حکومت قانون کی عملداری بحال کرنے کے لیے کوششوں میں مصروف ہے تاہم ان حالیہ جھڑپوں کے بعد ملک میں کرغز اور ازبک باشندوں کے درمیان تناؤ پیدا ہو گیا ہے۔

اسی بارے میں