بن لادن کے شکاری کی امریکہ واپسی

گیری بروکس فوکنر
Image caption گیری بروکس کے بھائی کا کہنا ہے کہ گیری گردوں کے مریض ہیں

بن لادن کو مارنے کے مشن پر تنہا آنے والے امریکی شہری گیری فوکنر پاکستان میں گرفتاری اور رہائی کے بعد واپس وطن پہنچ چکے ہیں۔

گیری بروکس فوکنر بدھ کو لاس اینجلس پہنچے انہوں نے ہوائی اڈے پر بات کرتے ہوئے کہا کہ وہ اپنا مشن ترک نہیں کریں گے۔

انہیں پشاور کے شمال میں واقع چترال کے پہاڑوں میں دس روز قبل گرفتار کیا گیا تھا۔

خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق مسٹر فوکنر کا کہنا ہے کہ ’یہ صرف میرا ہی مسئلہ نہیں ہے، یہ تمام امریکیوں کا اور ساری دنیا کا مسئلہ ہے۔ ہم بن لادن اور اس جیسے لوگوں کو یہ موقع نہیں دے سکتے کہ وہ ہمیں اپنے خوف میں مبتلا رکھیں‘۔

انہوں نے کہا کہ ’ہم ان لوگوں سے نہیں ڈرتے، ہم انہیں ڈرا سکتے ہیں اور میرا سارا مشن یہی ہے اور ہم یہ سارا معاملہ سنبھال لیں گے‘۔

فوکنر جو تعمیراتی کام کرنے والے (راج) مزدور ہیں، عرصے سے بے روزگار تھے اور انہیں اب امریکی ننجا قرار دیا جاتا ہے۔ انہیں افغانستان کے صوبے نورستان سے ملنے والی پاکستانی سرحد کے قریب گرفتار کیا گیا تھا۔ جس علاقے سے انہیں گرفتار کیا گیا اسے طالبان کا گڑھ سمجھا جاتا ہے۔

گرفتار ہونے کے بعد انہوں نے پوچھ گچھ کے دوران بتایا کہ وہ اسامہ بن لادن کو قتل کرنے کے تنہا مشن پر نکلے ہیں۔ اسامہ کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ پاکستان کے شمالی پہاڑی علاقے میں کہیں چھپے ہیں۔

القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن اس وقت دنیا کے انتہائی مطلوب ترین فرد ہیں اور امریکہ نے ایسی اطلاع دینے پر جس کے نتیجے میں انہیں گرفتار کیا جا سکے، پچیس ملین ڈالر یعنی سترہ ملیں پاؤنڈ کا انعام رکھا ہے۔

اسی بارے میں