’صدر اوباما مسلمان ہیں‘

فائل فوٹو، صدر اوباما
Image caption تحقیق کے مطابق لوگوں کا صدر اوباما کے مذہب کے بارے میں یقین ان کی سیاسی رائے سے منسلک ہے

امریکہ میں ایک حالیہ تحقیق کے مطابق ایسے امریکیوں کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے جو غلطی سے یہ سمجھتے ہیں کہ صدر اوباما مسلمان ہیں۔

پیو ریسرچ سینٹر کی تحقیق میں تین ہزار تین سو لوگ شامل تھے۔ تحقیق کے مطابق اٹھارہ فیصد لوگوں کا کہنا تھا کہ صدر براک اوباما مسلمان ہیں۔

یہ تعداد مارچ دو ہزار نو میں کیے گئے سروے سے گیارہ فیصد زیادہ ہے۔ ریپبلکن جماعت سے تعلق رکھنے والے چونتیس فیصد افراد کے مطابق اوباما مسلمان ہیں۔

تحقیق کے دوران کی گئی پولنگ میں ایک تہائی لوگوں نے صدر اوباما کو عیسائی قرار دیا۔تینتالیس فیصد لوگوں کا کہنا تھا کہ انھیں نہیں معلوم کا صدر اوباما کا مذہب کیا ہے۔

یہ تحقیق تیرہ اگست سے پہلے کیا گیا تھا جب صدر اوباما نے کہا تھا کہ گراؤنڈ زیرہ( سانحہ نائن الیون کی جگہ) پر مسجد تعمیر کرنا مسلمانوں کا حق ہے۔

وائٹ ہاوس نے لوگوں کی اس غلط فہمی کے بارے میں کہا ہے کہ صدر اوباما کے حریفوں کی جانب سے’ غلط معلومات‘ کی مہم چلائی جا رہی ہے۔

تحقیق کے مطابق لوگوں کا صدر اوباما کے مذہب کے بارے میں یقین ان کی سیاسی رائے سے منسلک ہے۔

جن لوگوں کا یقین ہے کہ صدر اوباما مسلمان ہیں وہ صدر کی کارکردگی کو پسند نہیں کرتے ہیں جب کہ جو لوگ انھیں عیسائی سمجھتے ہیں وہ ان کی کارکردگی کو پسند کرتے ہیں۔

تحقیق کے بعد امریکہ میں مقیم بعض مسلمانوں کو تشویش لاحق ہو گئی ہے کہ آئندہ ماہ گیارہ ستمبر کو عید کے موقع پر ان پر حملے ہو سکتے ہیں کیونکہ گیارہ ستمبر کو ہی سانحہ نائن الیون کا برسی ہے۔

اسی بارے میں