سپین: ’ایٹا‘ کا اعلانِ جنگ بندی

سپین ایٹا
Image caption اس مرتبہ بھی یہ واضح نہیں ہے کہ یہ جنگ بندی مستقل ہے یا عارضی

سپین میں علیحدگی پسند تنظیم ایٹا نے اعلان کیا ہے کہ وہ اپنی تحریک کے دوران اب مسلح کارروائیاں نہیں کرےگی۔

بی بی سی کو حاصل ہونے والی ایک ویڈیو میں علیحدگی پسند مسلح گروپ کی جانب سے کہا گیا ہے کہ اس نے مسلح کارروائیاں روکنے کا فیصلہ کئی ماہ پہلے کیا تھا تا کہ ایک جمہوری عمل شروع کیا جا سکے۔

سپین کی حکومت نے ابھی کوئی رد عمل ظاہر نہیں کیا ہے لیکن ماضی میں حکومت یہ کہہ چکی ہے کہ ایٹا سے صرف اسی صورت میں بات ہو سکتی ہے اگر وہ تشدد کا راستہ چھوڑ دے اور غیر مسلح ہو جائے۔

گزشتہ چالیس برسوں میں ایٹا کی پر تشدد کارروائیوں میں آٹھ سو بیس سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

اس سے پہلے بھی ایٹا دو مرتبہ جنگ بندی کا اعلان کر چکی ہے لیکن بعد میں ایٹا کی جانب سے اس جنگ بندی کو ختم کر دیا گیا۔ اس مرتبہ بھی یہ واضع نہیں ہے کہ یہ جنگ بندی مستقل ہے یا عارضی۔

ایٹا نامی تنظیم انیس سو انسٹھ میں بنی تھی جو شمالی سپین اور جنوب مغربی فرانس کے سات علاقوں پر مشتمل ایک علیحدہ ملک کے قیام کے لیے مسلح جدوجہد کر رہی ہے۔

ان علاقوں میں باسک باشندوں کی اکثریت ہے اور یہ تنظیم ان کی ترجمانی کرتی ہے۔