ملائیشیا میں حاملہ لڑکیوں کا سکول

حاملہ خاتون فائل فوٹو
Image caption سکول کو قائم کرنے کا مقصد ایسے بچوں کو تحفظ دینا ہے جنہیں اُن کی مائیں پیدائش کے بعد لاوارث چھوڑ دیتی ہیں

ملائیشیا کے شہر ملاکا میں نوجوان حاملہ لڑکیوں کے لیے قائم کیے جانے والا سکول جمعہ سے کام کرنا شروع کر رہا ہے۔

ملائیشیا میں شادی کے بغیر بچوں کی پیدائش باعثِ شرم تصور کی جاتی ہے اور اس سکول کو قائم کرنے کا مقصد ایسے بچوں کو تحفظ دینا ہے جنہیں اُن کی مائیں پیدائش کے بعد لاوارث چھوڑ دیتی ہیں۔

ملائیشیا کے حکام کے مطابق انہیں امید ہے کہ ملک کے جنوب میں قائم کیا جانے والا یہ سکول نوجوان لڑکیوں کو شادی سے پہلے اولاد پیدا کرنے کی ندامت سے نجات دلانے میں اہم کردار ادا کرے گا۔

اُن کے مطابق اِس سکول کے قائم ہونے سے نوجوان حاملہ لڑکیاں اپنے خاندان اور ہمسایوں سے اپنی زچگی چھپانے میں کامیاب ہو جائیں گی۔

واضح رہے کہ رواں برس ملائیشیا میں نوجوان حاملہ خواتین ستر نوزائیدہ بچوں کو کوڑا دانوں، گھروں کے باہر اور پبلک ٹائلٹس میں لاوارث چھوڑ گئی تھیں۔

دوسری جانب ملائیشیا میں امورِ خواتین کی وزیر نے اس منصوبے کی مخالفت کی ہے اور ان کا کہنا ہے کہ ایسی لڑکیوں کو باقی سکولوں سے الگ کرنے سے ان پر مزید تہمتیں لگیں گی اور تمام سکولوں میں سیکس کی تعلیم دینے سے اس مسئلے پر قابو پایا جا سکتا ہے۔

اسی بارے میں