افغانستان: امدادی کارکن اغوا

نقشہ

افعانستان میں سکیورٹی حکام کا کہنا ہے کہ شمال مشرقی صوبہ کُنڑ سے ایک برطانوی خاتون کو اغوا کر لیا گیا ہے۔

امریکی امدادی تنظیم ’ڈی اے آئی‘ کے لیے کام کرنے والی یہ خاتون دو گاڑیوں پر مشتمل قافلے میں تھیں جسے مسلح افرد نے روک لیا۔ اس خاتون کے ساتھ مقامی عملے کے بھی تین افراد کو اغوا کر لیا گیا ہے۔

برطانوی وزارت خارجہ نے برطانوی خاتون کے اغوا ہونے کی تصدیق کر دی ہے تاہم ان کی شناخت نہیں بتائی گئی۔

کابل میں بی بی سی کے نامہ نگار اِئین پینل نے بتایا ہے کہ یہ واقعہ صوبے کے دور دراز علاقے میں پیش آیا، ایک مقامی کاشتکار اس کے عینی شاہد تھے تاہم ان کو اس کی رپورٹ دینے کے لیے پولیس تک پہنچنے میں دو گھنٹے لگے۔

ابھی تک کسی تنظیم نے اس واقعہ کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔

اس علاقے میں کئی مسلح گروپ سرگرم ہیں اور خیال ہے کہ اس اغوا کا ذمہ دار گروپ یا تو خود تاوان کا مطالبہ کرے گا یا پھر مغویوں کو آگے کسی اور گروپ کو بیچ دے گا۔

اس سال افغانستان میں کام کرنے والے کئی غیر ملکی امدادی کارکنوں کو ہلاک کیا گیا ہے۔

اگست میں صوبہ بدخشان میں دس امدادی کارکنوں اور مترجموں کو قتل کیا گیا تھا۔ ان میں ایک برطانوی ڈاکٹر بھی شامل تھیں جو دور دراز واقع بستیوں میں لوگوں کے آنکھوں کا علاج کرتی تھیں۔

اسی بارے میں