امریکہ مذاکرات کیلیے حالات سازگار بنائے

عرب لیگ کے وزراء نے امریکہ کو مشرق وسطیٰ امن مذاکرات میں تعطل کو دور کرنے کے لیے ایک ماہ کا وقت دیا ہے۔

عرب لیگ کے وزراء جن کا اجلاس لیبیا میں ہو رہا ہے نے فلسطینی رہنماؤں کے موقف کی حمایت کی جس کے تحت فلسطینی رہنماؤں نے کہا ہے کہ اسرائیل کے ساتھ اس وقت تک مذاکرات شروع نہیں کیے جائیں گے جب تک اسرائیل یہودی بستیوں پر پابندی کا دوبارہ عائد نہیں کرتا۔

عرب لیگ اس بات پر متفق تھی کہ امریکہ کو تعطل کو توڑنے کے لئے وقت دیا جانا چاہیے۔

اسرائیل اور فلسطینی رہنماؤں کے درمیان دو سال کے تعط کے بعد مذاکرات دوبارہ ستمبر میں شروع ہوئے تھے۔ لیکن یہ مذاکرات اس وقت ختم ہوئے جب اسرائیل نے یہودی بستیوں کی تعمیر پر سے پابندی ختم کردی۔

اجلاس کے بعد قطر کے وزیر خارجہ شیخ حماد بن جاسم بن جبر الثانی جنہوں نے اس اجلاس کی صدارت کی نے نامہ نگاروں کو بتایا ’کمیٹی نے صدر عباس کے مذاکرات کو روکنے فیصلے کی تائید کی۔‘

’عرب لیگ امریکہ سے درخواست کرتی ہے کہ مذاکرات دوبارہ شروع کرانے کے لیے حالات کو سازگار بنائے۔‘

عرب لیگ کا اجلاس ایک ماہ بعد دوبارہ ہو گا جس میں صورتحال کا جائزہ لیا جائے گا۔

اسی بارے میں