چیچنیا کے حالات قابو میں نہیں

رمضان قادروف
Image caption ماسکو نواز صدر رمضان قادروف کہتے ہیں کہ چیچنیا پُر امن ہے۔

گزشتہ تقریباً ایک سال سے ماسکو شورش زدہ چیچنیا کو مستحکم اور ترقی پذیر صوبے کے طور پر پیش کر رہا تھا۔ لیکن منگل کو ہونے والے حملے نے ثابت کر دیا ہے کہ پرامن حالات کوئی زیادہ یقینی نہیں ہیں۔

بی بی سی کی نامہ نگار شاشہ شلیچٹر چیچنیا کی صورتِ حال کا تجزیہ کرتے ہوئے کہتی ہیں کہ چیچنیا دو صدیوں سے روس کے تاج میں ایک کانٹا رہا ہے۔

کئی زار اور روسی حکمران اس جنوبی پہاڑی خطے کو قابو کرنے کی کوشش کرتے رہے لیکن انہیں کامیابی نہیں ملی۔

چچن عوام کے ذہنوں میں دوسری جنگ عظیم کے بعد روسی آمر سٹالن کی جانب سے جرمن نازیوں کی مدد کے الزام میں چیچن لوگوں کو بڑی تعداد میں سائبیرا اور وسطی ایشیا بھیجنے کا واقع تازہ ہے۔

موجودہ بدامنی نوے کی دہائی کے اوائل میں سوویت یونین کے انہدام یا زوال کے بعد شروع ہوئی۔

چیچنیا کے اعلان آزادی نے بعد باغیوں اور ملیشیا گروہوں کے درمیان تیل اور دیگر وسائل پر قبضے کی جنگ کی شکل اختیار کر لی۔

اغوا ایک بڑا کاروبار بن گیا۔ انیس سو چورانوے میں صدر یلسن نے باغیوں کو کچلنے کے لیے روسی فوجی روانہ کیے لیکن چیچن مزاحمت نے صدر یلسن کے جلد کامیابی کی وعدہ پورے نہیں ہونے دیے۔

Image caption دارالحکومت گروزنی کی ایک تباہ حال عمارت

نئی صدی کے آغاز پر صدر پیوٹن نے دوبارہ فوج کشی کی۔ اس مرتبہ کی جانے والی کارروائی تیز اور ظالمانہ تھی اس کارروائی میں دارالحکومت گروزنی پر قبضہ تو ہو گیا لیکن اس کے بعد ایک اور خونی جنگ کا آغاز ہوگیا ہے۔

مغربی ممالک نے اس پر احتجاج کیا لیکن احتـجاج کا یہ سلسلہ گیارہ ستمبر دو ہزار ایک کے امریکی حلموں کے بعد بند ہو چکا ہے۔

اس کے بعد روس نے چیچن باغیوں کو عالمی دہشت گرد گروہ کے طور پر پیش کرنا شروع کر دیا اور خود چیچنز نے بھی اس الزام کو غلط ثابت کرنے کی کوئی کوشش نہیں کی۔

کریملن نے گزشتہ برس چیچن علیحدگی پسندوں کے خلاف ایک دہائی پر محیط فوجی کارروائی کو کامیاب قرار دیتے ہوئے اس کے خاتمے کا اعلان کیا تھا۔

چیچنیا ماسکو نواز صدر رمضان قاروف کے زیر انتطام پرامن ہے لیکن وقتاً فوقتاً ہونے والے پرتشدد واقعات یاد دلاتے ہیں کہ حالات مکمل طور پر قابو میں نہیں آئے ہیں۔

اسی بارے میں