امریکہ: پاکستانی نژاد امریکی گرفتار

Image caption فیصل شہزاد کو نیویارک کے ٹائم سکوائر میں بم دھماکہ کرنے کا جرم ثابت ہوچکا ہے۔

امریکہ میں ایک شخص کو گرفتار کرلیا گیا ہے جو مبینہ طور پر واشنگٹن ڈی سی میں زیر مین ریلوے سٹیشنوں پر بم حملے کرنے کی منصوبے بندی کررہا تھا۔

امریکی محکمہ انصاف نے کہا ہے کہ ریاست ورجنیا سے تعلق رکھنے والا چونتیس سالہ فاروق احمد ایسے لوگوں کے ساتھ مل کر منصوبہ بندی کررہا تھا جو اُس کے خیال میں القاعدہ سے تعلق ر کھتے ہیں۔

فاروق احمد کو بدھ کی صبح کو گرفتار کیا گیا ہے۔ اگر ان پر جرم ثابت ہو گیا تو انہیں پچاس برس قید کی سزا سنائی جا سکتی ہے۔

مشتبہ شخص کے بارے میں شبہ ہے کہ اُس نے واشنگٹن کے مضافات میں آرلنگٹن کے زیرِ زمین سٹیشن کا چار مرتبہ تفصیلی جائزہ لیا۔

سرکاری وکلاء نے جو شواہد فراہم کیے ہیں اُن کے مطابق فاروق احمد نے زیر زمین سٹیشن کی ویڈیو اور ایک یو ایس بی اُس شخص کے حوالے کی جس کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ القاعدہ سے تعلق رکھتا ہے۔

احمد کو بدھ کو ریاست ورجینا کی ایک عدالت میں پیش کیا گیا۔ فاروق احمد نے اس موقع پر عدالت کو بتایا کہ وہ وکیل لینے کا متحمل نہیں ہوسکتا۔ سرکاری وکلاء کہتے ہیں کہ مقدمے کی سماعت کے دوران خفیہ معلومات استعمال کی جائینگی۔

فاروق احمد کی گرفتاری امریکی شہریوں سے پوچھ گچھ اور تفتیش کے سلسلے کی تازہ کڑی ہے۔ اس سے پہلے ٹیکساس، کولوراڈو اور الینوائے میں بھی اسی طرح کے منصوبوں کی سازش کرنے کے شبے میں گرفتاریاں ہوچکی ہیں۔

حال ہی فیصل شہزاد کو نیویارک کے ٹائم سکوائر کو بم سے اڑانے کے شبے میں پکڑا جاچکا ہے۔

گرفتار کیا جانے والے شخص فاروق احمد پاکستانی نژاد امریکی شہری ہے۔

امریکی حکام نے کہا ہے کہ امریکہ کے قانون نافذ کرنے والے اداروں نے دہشتگردی کے اس منصوبے کو ناکام بنا دیا ہے۔

اسی بارے میں