نائن الیون دھول کا زر تلافی طے

نیویارک کے ٹون ٹاور پر دہشتگردانہ حملے کے نتیجے میں پیدا ہونے والی دھول سے متاثر ہونےوالے افراد نے چھ سو پچیس ملین ڈالر زرِ تلافی کے عوض شہری انتظامیہ کے خلاف ہرجانے کا دعویٰ کرنے کا ارادہ ترک کر دیا ہے۔

نیویارک کے ہزاروں لوگوں نے نائن الیون حملوں سے پیدا ہونے والے دھول سے متاثر ہونےکے خلاف شہر کی انتظامیہ کے خلاف مقدمہ بازی کا ارادہ کر رکھا تھا۔ دھول متاثرین کے وکلاء اور شہری انتظامیہ کے درمیان گزشتہ دو سالوں سے مذاکرات جاری تھے۔

متاثرین کے وکلاء نے کہا ہے کہ مذاکرات کا اچھا نتیجہ نکلا ہے اور ہزاروں متاثرین کو مجموعی طور پر چھ سو پچیس ملین ڈالر ملیں گے۔ پانچ سو بیس متاثرین نے شہری انتظامیہ سے طے پانے والے سودے کو ماننے سے انکار کیا ہے۔

نیویارک کے میئر مائیکل بلومبرگ نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ یہ معاہدہ منصفانہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس معاہدے سے ان لوگوں کو فائدہ ہو گا جو مشکل گھڑی میں لوگوں کی مدد کو پہنچے تھے۔

دھول کے متاثرین میں فائر فائٹرز کے علاوہ گراونڈ زیرو سے ملبے کو ہٹانے والی کمپنیوں کے ملازمین ہیں جن کی تعداد ہزاروں میں ہے۔

اس معاہدے کی منظوری کے لیے ضروری ہے کہ پچانوے فیصد متاثرین اس کی توثیق کریں۔ اس معاہدے کی رو سے متاثرین کو تین ہزار ڈالر سے لے کر ایک ملین ڈالر کا ہرجانہ ملے گا۔

ایسے متاثرین جو نائن الیون کے واقعے کے ساتھ ماہ کے اندر سانس کی تکلیف میں مبتلا ہوئے وہ زر تلافی کے حقدار قرار پائےہیں۔ سانس کی بیماریوں میں مبتلا ہونے متاثرین کو سب سے زیادہ مالی فائدہ ہو گا