کوسوو کے تاریخی انتخابات

کوسوو انتخابات

کوسوو میں آج پارلیمانی انتخابات ہو رہے ہیں جو تین سال قبل کوسوو کی جانب سے یک طرفہ طور پر آزادی کے اعلان کے بعد سے پہلے انتخابات ہیں۔

ان انتخابات کے موقع پر اکثریتی البانوی آبادی اور اقلیتی سرب باشندوں کے درمیان خلیج بدستور موجود ہے۔

سربیا نے کوسوو کی آزادی کو اب تک تسلیم نہیں کیا ہے اور کوسوو میں رہنے والے سرب نسل کے لوگ متوقع طور پر ان انتخابات کا بائیکاٹ کریں گے۔

یورپی یونین نے کہا ہے کہ یہ انتخابات کوسوو کی یونین میں شمولیت کے لحاظ سے اہم ہیں۔

انتخابی مہم کے دوران اداروں میں بدعنوانی اور خراب معیشت سب سے اہم موضوعات رہے۔

رائے عامہ کے جائزوں کے مطابق حکمران جماعت وزیر اعظم ہاشم تھاچی کی سیاسی جماعت ڈیموکریٹک پارٹی آف کوسوو ( پی ڈی کے ) کو برتری حاصل ہے لیکن اس بات کا امکان کم نطر آتا ہے کہ اسے واضع برتری حاصل ہو جائے۔

دوسری جانب ڈیموکریٹک لیگ آف کوسوو ( ایل ڈی کے ) جو پہلے حکمران اتحاد کا حصہ تھی اب پی ڈی کے کے لیے بڑا چیلنج بنتی جا رہی ہے۔

کوسو کی آبادی دو ملین ہے اور ان میں سربوں کی آبادی صرف ایک لاکھ بیس ہزار ہے۔