برطانوی اور روسی سفارتکاروں کی بےدخلی

Image caption ملک بدر کیے گئے دونوں سفارتکار اپنے اپنے ملک جا چکے ہیں

برطانیہ اور روس نے ایک دوسرے کے سفارتکاروں پر جاسوسی کے الزامات عائد کرنے کے بعد انہیں اپنے اپنے ملکوں سے بے دخل کردیا ہے۔

برطانیہ کے دفترخارجہ کا کہنا ہے کہ اس ماہ کے شروع میں لندن میں تعینات روس کے ایک سفارتکار سے کہا گیا تھا کہ وہ ملک چھوڑ دیں کیونکہ ان کی خفیہ سرگرمیاں برطانیہ کے مفاد میں نہیں۔

اس واقعہ کے چھ دن بعد، روس نے برطانیہ سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنے ایک سفارتکار کو ماسکو سے واپس بلا لے۔

یہ دونوں سفارتکار اپنے اپنے ملک جاچکے ہیں تاہم مبینہ جاسوسی کے بارے میں مواد اب تک منظرِ عام پر نہیں آیا ہے۔

دوسری جانب بی بی سی کے نمائندے کا کہنا ہے کہ سفارتی کشیدگی کے باوجود دونوں ممالک سفارتی تعلقات کو منجمد نہیں کریں گے کیونکہ فریقین چاہتے ہیں کہ ان کے درمیان تعلقات کو فروغ دیا جائے۔

برطانوی سیکرٹری خارجہ ولیم ہیگ کا کہنا ہے کہ ’ہم روس کے ساتھ کسی بھی دوسرے ملک کی مانند تعمیری تعلقات کے خواہاں ہیں اور انہیں چاہیے کہ وہ ہمارے قوانین کی پاسداری کریں‘۔