کرسمس پر سو تامل باغیوں کی رہائی

Image caption فوجیوں کے زیرِ انتظام چلنے والے کیمپوں میں ابتدا میں تقریبا ڈھائی لاکھ تمل باغی رکھے گئے تھے

سری لنکا کی حکومت نے کرسمس کے موقع پر ایک سو کے قریب تمل باغیوں کو رہا کر دیا ہے۔ان سو افراد کو جن میں دو خواتین بھی ہیں، واوینیا کے شمالی قصبے میں ایک تقریب میں رہا کیا گیا۔

گزشتہ سال جنگ میں شکست کے بعد سابق تمل باغیوں کو کیمپوں میں رکھا گیا تھا جہاں سے رہائی پانے والا یہ تازہ ترین گروپ ہے۔

حکومت کا کہنا ہے کہ ان کیمپوں میں پانچ سو کے قریب تمل باغی اب بھی موجود ہیں لیکن حقوقِ انسانی کے عالمی گروپ کہتے ہیں کہ میڈیا کو ان کیمپوں تک جانے کی اجازت نہیں ہے۔

فوجیوں کے زیرِ انتظام چلنے والے ان کیمپوں میں ابتدا میں تقریبا ڈھائی لاکھ تامل رکھے گئے تھے۔ یہ وہ افراد تھے جو سنہ دو ہزار نو کے اوائل میں حکومت کی جانب سے تمل باغیوں کے خلاف فیصلہ کن کارروائی کے بعد جنگی علاقوں سے بھاگے تھے۔

بہت سے تمل شکایت کرتے رہے ہیں کہ جہاں باغیوں کو رکھا گیا ہے وہ صورتِ حال ٹھیک نہیں ہے۔ سری لنکا کے حکام کو اس بنا پر بھی تنقید ہوئی کہ تمل افراد کو کیمپوں میں طویل عرصے تک رکھا گیا۔

سنیچر کو رہائی پانی والی دو خواتین میں سے ایک نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ انھیں زخمی حالت میں اس وقت حراست میں لیا گیا تھا جب وہ باغیوں سے جنگ میں مصروف تھی۔

خاتون کا کہنا تھا کہ انھیں ایک بحالی کیمپ میں مشورہ اور تربیت فراہم کی گئی جس سے انھیں فائدہ پہنچا ہے۔

اسی بارے میں