اسرائیلی فوج کا اظہارِ افسوس

امر قواسمی فائل فوٹو
Image caption حماس نے امر قواسمی کی ہلاکت کی ذمہ داری فلسطینی انتظامیہ اور اسرائیل پر عائد کی ہے

اسرائیلی فوج کے ترجمان نے غربِ اردن میں ہونے والے آپریش کے دوران مارے جانے والے امر قواسمی کی ہلاکت پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔

ترجمان کے مطابق اسرائیلی فوج نے اسلامی شدت پسند تنظیم حماس کے کارکنوں کی گرفتاری کے لیے غربِ اردن میں یہ آپریشن شروع کیا تھا۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ سڑسٹھ سالہ شخص امر قواسمی کے بارے میں یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ آیا کہ وہ کسی تخریبی کارووائی میں ملوث رہے تھے۔

اِس سے پہلے اسرائیلی فوج نے غربِ اردن میں اسلامی شدت پسندوں کی گرفتاری کے لیے کیے جانے والے آپریشن کے دوران فائرنگ کر کےامر قواسمی کو ہلاک کر دیا تھا۔

واضح رہے کہ اسرائیلی فوج نے فلسطینی انتظامیہ کی جانب سے غربِ اردن کے علاقے ہیبرون میں حماس کے حمایت یافتہ چھ افراد کو رہا کیے جانے والے افراد کو دوبارہ گرفتار کرنے کے لیے یہ آپریشن شروع کیا تھا۔

دوسری جانب حماس نے امر قواسمی کی ہلاکت کی ذمہ داری فلسطینی انتظامیہ اور اسرائیل پر عائد کی ہے۔

خبر رساں ادارے رائٹرز نیوز ایجنسی کے مطابق امر قواسمی کو اسرائیلی سپاہیوں نے اُن کے گھر کا دروازہ توڑ کر ہلاک کیا۔

امر قواسمی کی اہلیہ سبوہے کے مطابق انہوں نے فائرنگ کی متعدد آوازیں سنی اور بعد میں پتہ چلا کہ اُن کے خاوندکو قتل کر دیا گیا ہے۔

سبوہے کے مطابق جس وقت یہ واقعہ پیش آیا وہ اپنے گھر میں عبادت کر رہی تھیں اور انہیں یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ اسرائیلی سپاہیوں نے گھر کا دورازہ کیسے کھولا؟

سبوہے نے رائٹرز کو بتایا کہ اسرائیلی سپاہیوں نے اُن کے منہ پر ہاتھ اور سر پر رائفل رکھی ہوئی تھی۔

یاد رہے کہ فلسطین انتظامیہ کے صدر محمود عباس نے جمعرات کو ہیبرون جیل میں حماس کے چھ قیدیوں کی رہائی کا حکم دیا تھا۔

اسرائیل نے انیس سو سڑسٹھ میں غربِ اردن پر قبضہ کر لیا تھا اور موجودہ وقت میں اسرائیل پورے یروشلم پر اپنی غیر متنازعہ حاکمیت تصور کرتا ہے اور اسے اپنا دارالحکومت کہتا ہے۔

اسی بارے میں