سٹینڈرڈ اینڈ پوئرز کے صدر مستعفی

ایس اینڈ پی تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ادارے نے امریکہ کی ریٹنگ ٹرپل اے سے کم کر کے ڈبل اے پلس کر دی تھی۔

عالمی معشیت کے معیار کو جانچنے کے ادارے ’سٹینڈرڈ اینڈ پوئرز‘ کے صدر ڈیون شرما نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔

انہوں نے یہ استعفیٰ ادارے کی جانب سے امریکہ کی کریڈٹ ریٹنگ کم کیے جانے کے چند ہفتوں بعد دیا ہے۔

امریکی کریڈٹ ریٹنگ، چین کی تنقید

اب ادارے کے نئے سربراہ ڈگلس پیٹرسن ہوں گے جو سٹی بینک کے چیف آپریٹرنگ آفیسر ہیں۔ وہ بارہ ستمبر سے عہدہ سنبھالیں گے۔

ڈیون شرما اس سال کے آخر میں ادارہ چھوڑنے سے قبل ایک خاص منصوبے پر کام کریں گے۔

ایس اینڈ پی پر امریکہ کی کریڈٹ ریٹنگ کم کرنے پر امریکی حکام کی جانب سے سخت تنقید کی گئی تھی۔

ایس اینڈ پی کی جانب سے کی گئی ریٹنگ میں امریکہ کی ریٹنگ ٹرپل اے سے کم ہو کے ڈبل اے پلس ہوگئی ہے۔ یہ کریڈٹ ریٹنگ کی تاریخ میں پہلا موقع ہے کہ امریکہ کی درجہ بندی میں کمی کی گئی۔

یہ کمی طویل المدت درجہ بندی میں کی گئی ہے اور اس نے بڑھتے ہوئے بجٹ خسارے کی وجہ سے مستقبل کے لیے امریکی معیشت کا منظرنامہ بھی منفی دکھایا ہے۔

ایجنسی کا یہ بھی کہنا ہے کہ یہ کمی ظاہر کرتی ہے کہ امریکہ کے پالیسی ساز اور سیاسی اداروں کا استحکام اور ان کا اثر ایک ایسے وقت میں کم ہوا ہے جب انہیں مالیاتی اور اقتصادی چیلنجز کا سامنا ہے۔

امریکہ کے وزیرِ خزانہ ٹموتھی گیتھنر نے خبر رساں ادارے این بی سی کو ایک انٹرویو میں کہا کہ ایس اینڈ پی نے ایک خوفناک فیصلہ کیا ہے۔

سٹینڈرڈ اینڈ پوئرز نے یہ نہیں بتایا کے آیا ڈیون شرما کا استعفی کریڈٹ ریٹنگ میں کمی کے معاملے اور اس کی وجہ سے کی جانی والی تنقید کی وجہ سے ہے یا نہیں۔

ادارے کے ایک بیان میں کہا گیا ’ ایس اینڈ پی قابلِ موازنہ، پیشگی اور شفاف ریٹنگ کرتا رہے گا‘۔

اسی بارے میں