انگولا کی حسینہ مس یونیورس منتخب

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption لیلّی کے خیال میں ان کی مسکراہٹ ان کی فتح کی وجہ بنی

انگولا سے تعلق رکھنے والی لیلٰی لوپس نے سنہ 2011 کا مس یونیورس مقابلہ جیت لیا ہے۔

پچیس سالہ لیلٰی کا تعلق انگولا کے شہر بینگوئلا سے ہے اور وہ بزنس ایڈمنسٹریشن کی طالبہ ہیں۔

برازیل کے شہر ساؤ پاؤلو میں منعقدہ ساٹھویں مس یونیورس مقابلے کے فائنل کو دنیا بھر میں تقریباً دو ارب افراد نے ٹی وی پر براہِ راست دیکھا۔

اس مقابلے میں دنیا بھر سے نواسی حسینائیں شریک ہوئیں اور حتمی مرحلے تک رسائی پانے والی حسیناؤں میں مس انگولا کے علاوہ، مس چین، مس برازیل، مس یوکرین اور مس فلپائن بھی شامل تھیں۔

مقابلہ جیتنے کے بعد لیلٰی لوپس کا کہنا تھا کہ ان کے خیال میں ان کی مسکراہٹ ان کی فتح کی وجہ بنی۔

انہوں نے کہا کہ ’میں نے ہمیشہ بے حد خوش رہنے کی کوشش کی ہے اور مجھے لگتا ہے کہ آج میں اپنی شخصیت کا یہ پہلو سامنے لانے میں کامیاب رہی ہوں‘۔

لیلٰی لوپس کا یہ بھی کہنا تھا کہ مس یونیورس بننے کے بعد اب ان کی توجہ ان کے اپنے براعظم افریقہ اور باقی دنیا میں ایڈز اور غربت کے خلاف جنگ پر ہوگی۔