نواک جاکووچ یو ایس اوپن کے فاتح

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption جاکووچ ٹینس کی دنیا کے ایسے چھٹے کھلاڑی بن گئے ہیں جنہوں نے ایک سال کے دوران ٹینس کے چار میں سے تین بڑے مقابلے جیتے ہیں

سربیا کے نواک جاکووچ نے دفاعی چیمپئین رافیل ندال کو شکست دے کر سال کا آخری گرینڈ سلام ٹینس ٹورنامنٹ یو ایس اوپن جیت لیا ہے۔

نیویارک میں چار گھنٹے اور دس منٹ جاری رہنے والے فائنل میں جاکووچ نے ندال کو چھ دو، چھ چار، چھ سات اور چھ ایک کے سکور سے شکست دی۔

واضح رہے کہ دفاعی چیمپئین رافیل ندال جو اپنے کیرئیر کا گیارہواں ٹائٹل جیتنے کے لیے پر امید تھے رواں سال جاکووچ کے ساتھ کھیلے جانے والے تمام چھ مقابلوں میں شکست سے دوچار ہوئے ہیں۔

اس فتح کے بعد جاکوچ آسٹریلین، ویمبلڈن اور یو ایس اوپن کے فاتح بن گئے ہیں۔

جاکووچ ٹینس کی دنیا کے ایسے چھٹے کھلاڑی بن گئے ہیں جنہوں نے ایک سال کے دوران ٹینس کے چار میں سے تین گرینڈ سلام مقابلے جیتے ہیں۔

چوبیس سالہ جاکووچ نے اپنی فتح کے بعد کہا کہ وہ یہ اعزاز جیت کر بہت زیادہ خوشی محسوس کر رہے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا ’یہ سال میرے کیرئیر کے لیے بہت اہم رہا، میں جب بھی رافیل کے ساتھ کھیلتا ہوں تو وہ میرے لیے ایک چیلنج ہوتا ہے‘۔

سربیا کے کھلاڑی کی عمدہ کارکردگی کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ انہوں نے سنہ دو ہزارگیارہ میں چھیاسٹھ مقابلوں میں صرف دو مقابلے ہارے ہیں۔

جاکووچ کو رافیل ندال نے گزشتہ برس منعقد ہونے والے یو ایس اوپن کے فائنل میں شکست دی تھی۔

اسی بارے میں