وزرائے خارجہ ملاقات، حقانی گروپ زیرِ بحث

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ’ملاقات کے دوران حقانی نیٹ ورک پر دنوں ممالک کے موقف پر بحث سب سے بڑا موضوع رہا‘

پاکستان کی وزیر خارجہ حنا ربانی کھر نے نیویارک میں امریکی سیکرٹری خارجہ ہلیری کلنٹن سے ملاقات کی ہے جس میں حقانی نیٹ ورک سمیت دیگر موضوعات زیرِ بحث آئے ہیں۔

اتوار کو ہونے والی اس ملاقات میں پاکستانی سیکرٹری خارجہ سلمان بشیر اور امریکہ میں پاکستانی سفیر حسین حقانی کے علاوہ افغانستان اور پاکستان پر امریکی صدر باراک اوبامہ کے مشیر مارک گراسمین اور پاکستان میں امریکی سفیر کیمرون منٹر بھی موجود تھے۔

پاکستانی وزیرِ خارجہ نیویارک میں اقوام متحدہ میں جنرل اسمبلی کے چھیاسٹھویں سالانہ اجلاس میں شرکت کے لیے موجود ہیں۔

یہ ملاقات ایک ایسے وقت میں ہوئی ہے جب امریکہ اور پاکستان کے تعلقات سرد مہری کا شکار ہیں۔

نامہ نگار حسن مجتبٰی کے مطابق ملاقات کے بعد مقامی ہوٹل میں قائم پاکستانی حکومت کے بریفنگ مرکز میں میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے پاکستانی سیکرٹری خارجہ سلمان بشیر اور سفیر حسین حقانی نے بتایا کہ امریکی اور پاکستانی وزرائے خارجہ کی ملاقات میں دہشتگردی کے خلاف عالمی جنگ میں تعاون اور پاکستان میں حالیہ سیلاب میں امداد و تعاون زیر بحث رہے۔

تاہم بریفنگ کے دوران ایک صحافی کے سوال کے جواب میں پاکستانی سفیر نے اس بات کی تصدیق کی کہ ملاقات کے دوران حقانی نیٹ ورک پر دنوں ممالک کے موقف پر بحث سب سے بڑا موضوع رہا۔

بعد میں بریفنگ کےدوان پاکستانی سفیر نے میڈیا کو بتایا کہ پاکستان پہلے ہی کابل مں امریکی فوجی اڈے اور سفارتخانے پر ہونیوالے دہشت گرد حلموں کی مذمت کر چکا ہے۔

اسی بارے میں