اسرائیل جانے والی گیس پائپ لائن پر حملہ

شمالی مصر میں اسرائیل اور اردن کو قدرتی گیس فراہم کرنے والی پائپ لائن کے ایک حصہ کو دھماکے سے اڑا دیا گیا ہے۔

خبر رساں ادارے رائٹرز کا کہنا ہے کہ ایک قصبے العریش کے قریب سے گزرنے والی اس پائپ لائن کے ایک پمپنگ سٹیشن پر تین افراد نے فائرنگ کردی۔ العریش ایک سرحدی علاقہ ہے جو اسرائیل کے ساتھ سرحد سے تیس کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔

اطلاعات ہیں کہ فائرنگ کے باعث پائپ لائن میں آگ لگ گئی اور اس کے پینتالیس فٹ بلند شعلےدیکھے گئے۔

رواں برس گیس پائپ لائن پر اس قسم کے تقریباً چھ کے قریب حملے ہوچکے ہیں اور حملہ آور بظاہر وہ گروہ ہیں جو مصر کی گیس اسرائیل کو فروخت کرنے کے خلاف ہیں۔

یہ الزامات بھی سامنے آرہے ہیں کہ سنہ دو ہزار آٹھ میں سابق صدر حسنی مبارک کے ساتھ ہونے والے بیس سالہ معاہدے میں گیس کی قیمت کو مصنوعی طور پر بہت ہی کم سطح پر رکھا گیا تھا۔

اردن میں بجلی پیدا کرنے کے لیے گیس ٹربائن نصب ہیں اور وہ بجلی پیدا کرنے کے لیے مصر کی جانب سے فراہم کردہ گیس سے اسّی فیصد بجلی پیدا کرتا ہے جبکہ اسرائیل اپنی چالیس فیصد گیس کی ضروریات اپنے ہی ملک سے حاصل کی گئی گیس سے پوری کرتا ہے۔ شام بھی مصر سے ہی قدرتی گیس حاصل کرتا ہے۔

رواں برس فروری کے ماہ میں مصر میں ایک ایسے ہی حملے کے بعد قدرتی گیس کی فراہمی ایک ماہ کے لیے بند ہوگئی تھی۔

اسی بارے میں