ٹوکیو میں تابکار اثرات کی موجودگی

 تابکار اثرات کی جانچ تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption حکام کا کہنا ہے کہ تابکاری سے صحت کو کوئی خطرہ لاحق نہیں ہے

جاپان میں حکام کا کہنا ہے کہ دارالحکومت ٹوکیو کے ایک رہائشی علاقے سے تابکاری کی بلند سطح پائی گئی ہے۔

یہ جگہ جاپان میں زلزلے اور سونامی سے متاثر ہونے والے فوکوشیما جوہری پلانٹ سے دو سو کلومیٹر سے زائد فاصلے پر واقع ہے۔

تابکاری کے اثرات پھیلنے کے ممکنہ خدشات برقرار رہیں گے۔

ٹوکیو کے علاقے ستاگایا میں پیدل چلنے والے افراد کے ایک پختہ راستے پر تابکاری کی سطح تین اعشاریہ تین پانچ مائیکرو سائیورٹز فی گھنٹہ ہے جو کہ فوکوشیما جوہری پلانٹ کے ارد گرد کے ان چند متاثرہ علاقوں سے زیادہ ہے جہاں سے لوگوں کو انخلاء کے لیے کہا گیا تھا۔

حکام کا کہنا ہے کہ تابکاری سے صحت کے حوالے سے کوئی خطرہ نہیں ہے۔

ستاگایا میں راہ گیر کے ایک پختہ راستے پر ایک میٹر کی بلندی پر تابکار اثرات ملے ہیں۔

خبر رساں ادارے کیوڈو کے مطابق جس جگہ سے تابکاری کے اثرات ملے ہیں وہاں سے عام طور پر سکول کے بچے گزرتے ہیں جبکہ اس راستے کے دیگر حصے تابکاری اثرات سے متاثر نہیں ہوئے ہیں۔

احتیاطی تدابیر کے طور پر علاقے کو گھیرے میں لے لیا گیا ہے تاہم حکام کا کہنا ہے کہ تابکاری سے کوئی خطرہ نہیں ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ تابکاری سے متاثرہ حصے میں ایک سال تک روزانہ آٹھ گھنٹے گزارنے والا شخص سترہ مِلی سئیورٹز تابکار مقدار سے متاثر ہو گا جب کہ حکومت نے یہ حد بیس ملی سئیورٹرز سالانہ مقرر کر رکھی ہے۔

ایک اہلکار کے مطابق تابکاری کے اثرات بہت ہی محدود حصے سے ملے ہیں اور علاقے کے رہائیشوں کے خدشات دور کرنے کے لیے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔

اس ضمن میں تحقیقات شروع کی دی گئی ہیں تاکہ اندازہ لگایا جا سکے کہ کس نوعیت کے تابکاری اثرات موجود ہیں اور متاثرہ حصے سے تابکار اثرات ختم کرنے کے لیے کیا اقدامات کیے جائیں۔

علاقے کے میئر نے برطانوی خبر رساں ادارے رائٹرز کو بتایا کہ پٹری یا فٹ پاتھ کو پانی سے صاف کرنے سے تابکار اثرات پھیلے نہیں ہیں لیکن لوگوں احتیاطً اس راستے سے نہ گزریں۔

حکام کے خیال میں ہو سکتا ہے کہ بارش کا آلودہ پانی فٹ پاتھ پر گرنے سے پہلے کسی چھت پر جمع تھا۔

حکام نے علاقے میں دو سو اٹھاؤن پارکس کا معائنہ شروع کر دیا ہے۔

اسی بارے میں