ترکی کا زلزلہ: ہلاکتوں کی تعداد 450 ہو گئی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بہت سے افراد اب بھی ملبے کے نیچے پھنسے ہوئے ہیں

ترکی کے مشرقی شہر وان اور قریبی علاقوں میں زلزلے سے ہلاک ہونے والے افراد کی تعداد چارسو پچاس ہوگئی ہے اور تقریباً تیرہ سو افراد کے زخمی ہونے کی اطلاع ہے۔

اتوار کو آئے شدید زلزلے سے تقریباً دو ہزار عمارتیں تباہ ہوگئیں ہیں اور اب بھی کئی افراد متاثرہ عمارتوں کے ملبے تلے دبے ہوئے ہیں تاہم ان کی درست تعداد کا اندازہ نہیں لگایا جا سکا ہے۔

بدھ کو امدادی کام کرنے والوں نے ایک رہائشی عمارت کے ملبے سے چوبیس گھنٹے گزر جانے کے بعد ایک نو زائیدہ بچے، اس کی ماں اور دادی کو بحفاظت نکال لیا ہے۔ بچے کے باپ کی ہزاروں دیگر لاپتہ افراد کی طرح تلاش جاری ہے۔

زلزلے کے بعد متاثرین نے سرد موسم میں دوسری رات بھی کھلے آسمان تلے گزاری ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ امدادای کارروائیاں زور شور سے جاری ہیں اور ڈھائی ہزار افراد پر مشتمل عملہ لوگوں کو باہر نکالنے کے کام میں مشغول ہے جبکہ چھ سو اسّی ڈاکٹروں کی ٹیم طبّی کاموں پر مامور کی گئی ہے۔

سات فضائی ایمبولنس سمیت ایک سو آٹھ ایمبولنس گاڑیوں کی مدد لی جا رہی ہے۔ سب سے زیادہ نقصان ایرکس شہر کو پہنچا جہاں سب سے زیادہ عمارتوں کے منہدم ہونے کے واقعات ہوئے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ڈر کے سبب بہت سے لوگوں نے رات گھر سے باہر گزاری

زلزلے کے بعد رات بھر امدادی کارروائیاں جاری رہیں اور ایسے خدشات ظاہر کیےگئے ہیں کہ ہلاک ہونے والوں کی تعداد میں اضافہ ہوگا۔

ریسکیو اہلکار تمام رات لوگوں کو نکالنے کا کام کرتے رہے لیکن رات میں انہیں روشنی کے لیے بہت کم جنریٹرز میسر تھے۔

زلزلے کے بعد آنے والے آفٹر شاکس یا جھٹکوں کی وجہ سے ہزاروں لوگوں نے انتہائی سرد موسم میں رات کھلے آسمان تلے گزاری۔

ترکی کے زلزلے سے متعلق سینٹر کے سربراہ مصطفیٰ آردیک کا کہنا ہے کہ ایک اندازے کے مطابق ہزار کے قریب عمارتیں متاثر ہوئی ہیں اور سینکڑوں ہلاکتیں ہو سکتی ہیں۔

زلزلہ ترکی کے مقامی وقت کے مطابق دوپہر کے ایک بج کر اکتالیس منٹ پر آیا اور اس کی سدت ریکٹر سکیل پر سات اعشاریہ دو تھی۔ زلزلے کا مرکز زمین کی سطح سے بیس کلومیٹر نیچے تھا۔

اتوار کی شام کو بھی زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے جن کی شدت چھ اور پانچ اشاریہ چھ تھی۔

ایک بڑی فالٹ لائن پر ہونے کے باعث ترکی میں زلزلوں کا خطرہ رہتا ہے۔ انیس سو ننانوے میں شمال مغربی حصے میں آئے زلزلےسے بیس ہزار افراد ہلاک ہوئے تھے۔

اسی بارے میں