قندھار میں خودکش حملہ، کم از کم چار ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ .
Image caption دو حملہ آور سکیورٹی فورسز کے گھیرے میں ہیں

افغانستان کے جنوبی شہر قندھار میں ایک خودکش حملے میں متعدد افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

افغان حکام کا کہنا ہے کہ کار میں سوار حملہ آور نے ڈانڈ کے علاقے میں ایک حفاظتی چوکی کو نشانہ بنایا ہے۔

جس جگہ حملہ ہوا ہے وہاں اقوامِ متحدہ کے ہائی کمشنر برائے پناہ گزیناں اور امریکی غیر سرکاری تنظیم انٹرنیشنل ریلیف اینڈ ڈویلپمنٹ کے دفاتر ہیں۔

اس دھمااکے میں تین شہری اور افغان پولیس کا ایک اہلکار مارا گیا ہے جبکہ پانچ زخمیوں کو ہسپتال منتقل کیا گیا ہے۔

حکام کے مطابق حملہ آوروں کی تعداد تین ہے اور خودکش حملہ آور کے ساتھی دفتر کے احاطے میں موجود ہیں اور وہ سکیورٹی فورسز کے گھیرے میں ہیں۔

افغان حکام کا کہنا ہے کہ اب تک دھماکے میں تین افراد کی ہلاکت کی تصدیق ہوئی ہے تاہم یہ واضح ہیں کہ وہ عام شہری ہیں یا ان کا تعلق سکیورٹی فورسز سے ہے۔

طالبان نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے اور کہا ہے کہ ان کا ہدف اقوامِ متحدہ کے ہائی کمشنر برائے پناہ گزیناں کا دفتر تھا۔

خیال رہے کہ سنیچر کو بھی ایک کار سوار طالبان خودکش حملہ آور نے کابل میں غیر ملکی فوج کے قافلے کو نشانہ بنایا تھا اور اس حملے میں تیرہ امریکیوں سمیت سترہ افراد ہلاک ہوئے تھے۔

مرنے والوں میں پانچ امریکی فوجی اور آٹھ امریکی سول اہلکار تھے اور یہ دس برس قبل افغانستان میں غیر ملکی فوج کی آمد کے بعد سے اب تک ان پر ہونے والا سب سے مہلک زمینی حملہ تھا۔

اسی بارے میں