فلسطین کو یونیسکو کی رکنیت مل گئی

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption امریکہ یونیسکو کو سالانہ ستّر ملین ڈالر دیتا ہے

فرانس میں اقوام ِ متحدہ کے ادارہ برائے تعلیم ، سائنس اور ثقافت یعنی یونیسکو نے فلسطین کی جانب سے دائر کی جانے والی مکمل رکنیت کی درخواست کثرتِ رائے سے منظور کرلی ہے۔

رائے شماری کے دوران فلسطین کے حق میں ایک سو سات اور مخالفت میں چودہ ووٹ آئے جبکہ برطانیہ سمیت باون ممالک نے رائے شماری میں حصہ نہیں لیا۔

برطانیہ کے یونیسکو میں مندوب نے کہا کہ فلسطینی عوام کی خواہش ہے کہ مزاکرات کے عمل کو تیزی سے آگے بڑھایا جائے اور برطانیہ بھی یہی چاہتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ خطے میں امن کے لیے دو ریاستوں کا قیام ضروری ہے مگر اس کے لیے یہ جگہ مناسب نہیں اسی لیے ہم اس پر کی جانے والی رائے شماری میں حصہ نہیں لے رہے۔

اپنا رد عمل ظاہر کرتے ہوئے یونیسکو میں امریکہ کے مندوب ڈیوڈ کلون نے کہا کہ فلسطین کی رکنیت کامعاملہ ابھی ناپختہ ہے۔

’فلسطینی ریاست کی جانب جانے والا راستہ صرف ایک ہے اور وہ براہِ راست مزاکرات سے گزرتا ہے۔ اس کے لیے کوئی دوسرا مختصر راستہ نہیں اختیار کرنا چاہیے۔ اور ہم سمجھتے ہیں جو آج ہم نے دیکھا ہے اس سے اس عمل کو نقصان پہنچے گا۔ اس سے ہماری یونیسکو کی مدد کرنے کی صلاحیت بھی متاثر ہوگی، فلسطین کے اپنے کاز کی تشہیر کے دوسرے ذرائع بھی ہوسکتے تھے۔‘

امریکہ اور اسرائیل نے یونیسکو میں فلسطین کو رکنیت دینے کی مخالفت کی تھی اور امریکا نے یہ بھی کہا تھا یہ اگر فلسطین کو رکنیت دی گئی تو وہ یونیسکو کو سالانہ دی جانے والی امداد میں کٹوتی کردے گا۔ یونیسکو کے کُل بجٹ کا بیس فیصد یعنی سات کروڑ ڈالر امریکا دیتا ہے۔

فلسطین کی جانب سے یونیسکو کا رکن بننے کی درخواست کو اس کی بطور ریاست اقوامِ متحدہ کی مکمل رکنیت پر سلامتی کونسل میں ہونے والی ووٹنگ کے تناظر میں دیکھا جا رہا ہے۔

عالمی رہنماؤں کا خیال ہے کہ یہ فلسطین کی جانب سے عالمی پہچان بنانے اور اسرائیل پر دباؤ ڈالنے کی کوشش ہے۔

فلسطین کی جانب سے یونیسکو کی رکنیت حاصل کرنے کی کوشش فلسطینی صدر محمود عباس کی جانب سے ان کے ملک کو اقوامِ متحدہ کا مکمل رکن بنانے کے مطالبے کے ایک ماہ بعد کی گئی ہے۔

اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل کے ارکان فلسطینی صدر کی اس درخواست پر نومبر میں ووٹ ڈالیں گے جبکہ امریکہ کا کہنا ہے کہ وہ اس درخواست کو ویٹو کر دے گا۔

اسی بارے میں