’ایران جوہری معاملات پر فوراً وضاحت کرے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ایران پر دباؤ بڑھانے کے لیے امریکہ اپنے اتحادیوں سے مشاورت کا سلسلہ جاری رکھے گا:ہلری کلنٹن

امریکی وزیرِ خارجہ ہلری کلنٹن نے ایران سے کہا ہے کہ وہ جلد از جلد اقوامِ متحدہ کے جوہری نگرانی کے ادارے کے خدشات دور کرے۔

آئی اے ای اے نے حال ہی میں اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ ایسا لگتا ہے کہ ایران جوہری بم کی ٹیکنالوجی پر کام کر رہا ہے۔

امریکی ریاست ہوائی کے دارالحکومت ہونولولو میں ایشیا اور بحرالکاہل کے کنارے آباد ممالک کے اجلاس کے موقع پر وزرائے خارجہ کی ملاقات کے بعد صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے امریکی وزیرِ خارجہ کا کہنا تھا کہ ’اپنے جوہری پروگرام کے حوالے سے ایران کے دھوکہ دینے اور انکار کرنے کی تاریخ بہت پرانی ہے‘۔

انہوں نے کہا کہ ’آنے والے دنوں میں ہم ایران سے توقع کرتے ہیں کہ وہ ان سنجیدہ سوالوں کا جواب دے گا جو اس رپورٹ میں اٹھائے گئے ہیں‘۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ایران پر دباؤ بڑھانے کے لیے امریکہ اپنے اتحادیوں سے مشاورت کا سلسلہ جاری رکھے گا۔

واضح رہے کہ اقوامِ متحدہ کے جوہری ادارے ’آئی اے ای اے‘ نے ایران پر اپنی تازہ رپورٹ میں کہا ہے کہ ایرانی تحقیق میں جو کمپیوٹر ماڈل شامل ہیں وہ جوہری بم بنانے میں استعمال کیے جاسکتے ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ایران سے درخواست کی گئی ہے کہ وہ وضاحتیں دینے کے لیے بلا تاخیر اقوامِ متحدہ کے جوہری ادارے سے رابطے میں رہے۔

اس رپورٹ کے بعد فرانس اور امریکہ ایران پر نئی پابندیاں عائد کرنے کے بارے میں سوچ رہے ہیں تاہم روس نے کہا ہے کہ وہ اقوامِ متحدہ کے جوہری ادارے کی رپورٹ کے باوجود وہ ایران کے خلاف پابندیاں عائد کرنے کے فیصلے کی حمایت نہیں کرے گا کیونکہ ایران کے خلاف دیگر پابندیاں عائد کرنے کا مقصد وہاں حکومتی نظام تبدیل کرنا ہو سکتا ہے۔

خیال رہے کہ امریکہ اور اس کے اتحادی ممالک نے شبہ ظاہر کیا ہے کہ ایران جوہری ہتھیار بنا رہا ہے جن سے اسرائیل کو خطرہ ہو سکتا ہے۔ لیکن ایران اس بات پر بضد ہے کہ جوہری پروگرام کا مقصد صرف ایرانی شہریوں کو بجلی کی سہولت فراہم کرنا ہے۔

اسی بارے میں