اٹلی:بچت اصلاحات پر ایوانِ زیریں میں بحث

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سینیٹ سے منظوری کے بعد اب یہ تجاویز ایوانِ زیریں میں پیش کی جائیں گی

اطالوی سینیٹ سے بچت اصلاحات کی منظوری کے بعد يوروزون کی تیسری سب سے بڑی معیشت اٹلی کے ایوانِ زیریں میں سینیچر کو اخراجات میں کمی کی ان تجاویز پر بحث ہو رہی ہے۔

یہ بچت اصلاحات یورو زون اور خود اٹلی کو درپیش قرضوں کے بحران کے خاتمے کی کوششوں کا اہم حصہ ہیں۔

جمعہ کو اٹلی کے ایوان بالا نے ریٹائرمنٹ کی عمر میں اضافے، ایندھن کی قیمتیں بڑھانے اور سرکاری املاک کی فروخت جیسی تجاویز پر مشتمل اس منصوبے کی منظوری دے دی تھی۔

بچت تجاویز میں ویلیو ایڈڈ ٹیکس کو بیس سے بڑھا کر اکیس فیصد کرنے اور سرکاری تنخواہوں میں سنہ 2014 تک اضافہ نہ کرنے کی تجاویز بھی شامل ہیں۔

اٹلی میں كٹوتيوں کی ان تجاویز کے تحت تقریباً ساٹھ ارب یورو کی بچت کا امکان ہے اور ان کی اطالوی سینیٹ سے منظوری کے بعد بازارِ حصص میں تیزی کا رجحان دیکھا گیا تھا۔

سینیٹ میں بچت اقدامات کے حق میں ایک سو چھپن جبکہ مخالفت میں بارہ ووٹ ڈالے گئے تھے۔ توقع ہے کہ سینیٹ کے بعد پارلیمینٹ کا ایوانِ زیریں بھی سنیچر کو انہیں منظور کر لے گا اور اس کے بعد اٹلی کے وزیرِاعظم سلویو برلسکونی اپنے وعدے کے مطابق وزارتِ عظمٰی سے استعفی دے دیں گے۔

اطالوی وزیر اعظم سلویو برلسکونی نے اپنے عہدے سے مستعفی ہونے پر مشروط آمادگی اس وقت ظاہر کی تھی جب پارلیمان میں ووٹنگ کے بعد یہ انکشاف ہوا تھا کہ انہیں پارلیمان میں اکثریت حاصل نہیں رہی۔

اٹلی اس وقت بھاری قرضوں تلے دبا ہوا ہے اور اسے مالی منڈیوں سے مزید قرضے لینے کے لیے زیادہ شرح پر ادائیگی کرنا ہے۔ یورپی یونین کے معیشت کے امور کے کمشنر کا کہنا ہے کہ قرضوں کے بحران کی صورت حال خاصی تشویشناک ہے۔

برلسکونی کے حامی اور مخالفین دونوں ان سے اٹلی کے قرضوں کے بحران کے تناظر میں استعفے کا مطالبہ کر رہے تھے۔

سلویو برلسکونی اٹلی کے سیاسی منظر پر سترہ سال سے براجمان ہیں۔ ان کے خلاف پچاس کے قریب عدم اعتماد کی تحاریک آئیں لیکن وہ کامیاب رہے۔ تاہم حال ہی میں ان کے خلاف قانونی اور جنسی سکینڈل کے سلسلوں نے اور سیاسی اور معاشی بحران نے ان کی سیاسی زندگی کی کمر توڑ کر رکھ دی تھی۔

اسی بارے میں