نیویارک میں یومِ احتجاج، درجنوں گرفتار

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption پولیس نے دو سو کے قریب افراد کو حراست میں لے لیا

امریکی شہر نیویارک میں معاشی ناہمواریوں کے خلاف احتجاج کرنے والے ہزاروں افراد نے یومِ احتجاج مناتے ہوئے بروکلین پُل پر پیدل مارچ کیا ہے۔

یہ دن امریکہ میں ’وال سٹریٹ پر قبضہ کرو‘ نامی مہم کے دو ماہ پورے ہونے پر منایا جا رہا ہے۔

نیویارک کے علاوہ امریکہ کے متعدد شہروں میں بھی لوگوں نے جمعرات کو جلوس نکالے اور معاشی تفریق کے خلاف نعرے بلند کیے۔

جمعرات کو اس یومِ احتجاج کا آغاز نیویارک کے مالیاتی گڑھ سمجھے جانے والے علاقے سے ہوا تھا جہاں پولیس نے دو سو سے زائد افراد کو گرفتار بھی کیا۔

اسی احتجاج کے دوران مظاہرین نے نیویارک کے سب وے سٹیشنز پر بھی ’قبضہ‘ کرنے کی کوشش کی۔

نیویارک کے میئر مائیکل بلومبرگ کے مطابق مظاہرین سے ہاتھا پائی میں پانچ پولیس اہلکار معمولی زخمی ہوئے ہیں۔

یومِ احتجاج کا منصوبہ مین ہٹن میں واقع زکوٹی پارک سے ان اس احتجاجی مہم کے ارکان کی بے دخلی سے قبل ہی بن چکا تھا۔

وال سٹریٹ مخالف مہم کے ارکان دو ماہ سے اس پارک میں دھرنا دیے بیٹھے تھے تاہم منگل کو علی الصبح پولیس نے ان کا کیمپ ختم کروا دیا تھا۔بعدازاں عدالت نے بھی ان افراد کو پارک میں قیام کرنے سے منع کر دیا تھا۔

جمعرات کو شام ڈھلے یہ مظاہرین جن میں بڑی تعداد میں یونینوں کے ارکان بھی شامل ہوگئے تھے بروکلین پُل کے فٹ پاتھ پر چلنا شروع ہوئے تھے۔

اس موقع پر پولیس نے کم از کم دو درجن ایسے لوگوں کو گرفتار کیا جو سڑک پر آ کر ٹریفک میں خلل کا باعث بن رہے تھے تاہم مجموعی طور پر مظاہرین کی بڑی تعداد بغیر کسی مسئلے کے پل سے گزر گئی۔

یہ مظاہرین پل کے قریب واقع فولے سکوائر میں جمع ہوئے ہیں جہاں پولیس اہلکاروں کی بڑی تعداد موجود ہے۔

Image caption مظاہرین سے ہاتھا پائی میں پانچ پولیس اہلکار معمولی زخمی ہوئے

جمعرات کی صبح سینکڑوں مظاہرین نے نیویارک سٹاک ایکسچینج کے قریبی علاقے میں جانے کی کوشش کی تو انہیں پولیس کی جانب سے کھڑی کی گئی رکاوٹوں کا سامنا کرنا پڑا۔

اسی کوشش کے دوران مظاہرین اور پولیس اہلکاروں میں ہاتھا پائی بھی ہوئی جس میں پانچ اہلکار زخمی ہوگئے جبکہ پولیس نے دو سو کے قریب افراد کو حراست میں لے لیا۔

نیویارک کے میئر کے مطابق زخمی ہونے والے پولیس اہلکاروں میں سے ایک کا ہاتھ کٹا ہے جبکہ باقی چار پر سرکہ پھینکا گیا تھا۔

ادھر امریکہ کے مختلف شہروں میں بھی جمعرات کو ’وال سٹریٹ پر قبضہ کرو‘ مہم کے شرکاء سے اظہارِ یکجہتی کے لیے جلوس نکالے گئے۔

ریاست کیلیفورنیا کے درالحکومت لاس اینجلس میں پانچ سو افراد نے بینک مخالف نعرے لگاتے ہوئے جلوس نکالا اور ان میں سے دو درجن سے زائد افراد کو پولیس نے حراست میں لیا۔ اس کے علاوہ ڈیلاس میں پولیس نے ایک احتجاجی کیمپ اکھاڑ دیا اور بیس افراد کو حراست میں لیا۔

ریاست پورٹ لینڈ اور اوریگون سے بھی مظاہرین کو حراست میں لیے جانے کی اطلاعات ملی ہیں۔ ان علاقوں کے علاوہ لاس ویگاس، میامی، ڈیٹرائٹ اور سینٹ لوئیس میں بھی مظاہرے ہوئے جن میں شامل افراد نے حکومت سے نوکریاں دینے کا مطالبہ کیا۔

اسی بارے میں