’پاکستان میں شرح پیدائش سب سے زیادہ‘

تصویر کے کاپی رائٹ bbc
Image caption مسلمان ممالک میں پاکستان میں مانع حمل ادوایات کا استعمال سب سے کم کیا جاتا ہے: اقوامِ متحدہ

اقوامِ متحدہ کے مطابق مسلمان ممالک میں سب سے زیادہ شرح پیدائش پاکستان میں ہے۔

اقوامِ متحدہ کی ایک رپورٹ کے مطابق جنوبی ایشیا کے جن ممالک میں مانعِ حمل ادوایات کا استعمال کم ہوتا ہے اس میں پاکستان سرِفہرست ہے۔

رپورٹ کے مطابق پچھلے ساٹھ برسوں میں مانعِ حمل ادویات کے استعمال کا رجحان بڑھا ہے۔

اقوام متحدہ کے ایک جائزے کے مطابق مسلمان ممالک میں پاکستان میں مانع حمل ادویات کا استعمال سب سے کم کیا جاتا ہے۔

جائزے میں کہا گیا ہے کہ پاکستان میں پچھلے ساٹھ برسوں میں آبادی میں کمی کے لیے سرکاری اور غیر سرکاری چلنے والی متعدد فیملی پلاننگ کی مہم کے باوجود صرف انیس فیصد خواتین مانع حمل کی ادویات کا استعمال کرتی ہیں۔

اس کے مقابلے میں ایران میں ان ادویات کا استعمال سب سے زیادہ دیکھنے میں آیا ہے جہاں ان ادویات کے استعمال کی شرح بڑھ کر انسٹھ فیصد ہو گئی ہے۔

انڈونیشیا جو آبادی سے لحاظ سے مسلم ممالک میں سے سب سے اوپر ہے وہاں مانعِ حمل ادویات کے استعمال کی شرح ستاون فیصد ریکارڈ کی گئی ہے جبکہ بھارت میں یہ شرح انچاس فیصد اور بنگلہ دیش میں اڑتالیس فیصد ہے۔

خیال رہے کہ سال دو ہزار آٹھ میں پاکستانی وزیر اعظم سید یوسف رضا گیلانی نے کہا تھا کہ آبادی میں تیزی سے اضافے سے اقتصادی شعبے میں جو ترقی ہوتی ہے اُس کے اثرات بہت جلد ختم ہو جاتے ہیں۔

انہوں نےکہا کہ آبادی کو کنٹرول کرنے کے لیے مؤثر حکمت عملی حکومت کی اولین ترجیحات میں سے ایک ہے۔ انہوں نے اعلان کیا تھا کہ حکومت آئندہ پانچ سال میں آبادی میں اضافے کی شرح کو تقریباً ڈیڑھ فیصد پر لے آئے گی۔

اسی بارے میں