ایران: نئے میزائل کا کامیاب تجربہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

ایران کی سرکاری خبر رساں ایجنسی کے مطابق ایران نے خلیجِ فارس میں بحری مشقوں کے دوران درمیانی مار کے زمین سے ہوا میں مار کرنے والے میزائل کا کامیاب تجربہ کیا ہے۔

ایرانی بحری کمانڈر محمود موسوی کا کہنا تھا کہ مزائل جدید ترین ٹیکنالوجی اور ’انٹیلیجنٹ سسٹم‘ سے آراستہ تھا۔

انہوں نے ایک دن قبل ہی ان خبروں کی تردید کی تھی کہ ایران نے دور تک مار کرنے والے میزائل کا تجربہ کیا ہے۔ البتہ سنیچر کو انہوں نے کہا تھا کہ آنے والے دنوں میں میزائلوں کے تجربات کیے جائیں گے۔

ایران کی دس روزہ بحری مشقیں گزشتہ ہفتے شروع ہوئی تھیں اور وہ عسکری اہمیت والے آبنائے ہرمز کے مشرق میں بین الاقوامی سمندر میں جاری ہیں۔

یہ مشقیں ایسے موقع پر کی جا رہی ہیں جب ایران اور مغرب کے مابین ایرانی جوہری پروگرام پر کشیدگی پائی جاتی ہے۔

ایران نے پچھلے ہفتے ان رپورٹوں کی شدید مذمت کی تھی جن کے مطابق مغربی ممالک ایران کے خلاف مزید اقتصادی پابندیوں پر غور کر رہے ہیں۔

ان خبروں کے پیشِ نظر ایران نے آبنائے ہرمز کو بند کرنے کی دھمکی بھی دی تھی جو کہ جو کہ خلیجِ فارس اور بحرہِ ہند کو ملاتا ہے۔ دنیا کا تقریباً بیس فیصد تیل آبنائے ہرمز کی تنگ پٹی سے گزرتا ہے۔

امریکہ اور اس کے اتحادیوں کا اندیشہ ہے کہ ایران جوہری ہتھیار بنانے کی کوشش کر رہا ہے جبکہ ایران ان الزامات کو مسترد کرتا ہے۔

تہران کا کہنا ہے کہ ایران کا جوہری پروگرام صرف پر امن مقاصد کے لیے ہے اور ایران کو اپنے ملک میں بجلی کی بڑھتی ہوئی طلب کے لیے جوہری ٹیکنالوجی کی ضرورت ہے۔

اسی بارے میں