شام: زبدانی شہر میں مظاہرہ، فوج داخل

Image caption لبنانی سرحد کے قریب شام کے شہر زبدانی میں حکومت کے خلاف بڑا مظاہرہ کیا گیا

شام میں لبنانی سرحد کے قریب شہر زبدانی میں صدر بشارالاسد کے خلاف ایک بڑے مظاہرے کے بعد فوج کو تعینات کردیا گیا ہے۔

شام میں انسانی حقوق کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ فوج نے شہر میں گولہ باری کی ہے جبکہ اسے ہلکی پھلکی مزاحمت کا سامنا بھی کرنا پڑا۔

ملک کے طول و عرض میں لاکھوں افراد فوجی باغیوں کے حق میں مظاہرے کررہے ہیں۔ فوجی باغیوں کا گروپ جسے مقامی افراد ’آزاد شامی فوج‘ کا نام دے رہے ہیں، صدر اسد کی حکومت کو گرانے کے درپے ہے۔

کارکنوں کے ایک گروپ کا کہنا ہے کہ زبدانی میں فوجی کارروائی کے نتیجے میں کم سے کم بارہ شہری ہلاک ہوگئے ہیں۔

زبدانی میں حزبِ مخالف کے ایک سینئیر رہنماء کمال اللبوانی دو ہفتے قبل اردن فرار ہوگئے ہیں جہاں سے انہوں نے بتایا کہ شہر سے رابطہ کرنا محال ہوگیا ہے تاہم وہ چند افراد سے بات کرنے میں کامیاب ہوگئے ہیں۔

انہوں نے خبر رساں ادارے رائٹرز کو بتایا ’ٹینک شہر میں بمباری کررہے ہیں اور مضافات میں داخل ہوچکے ہیں تاہم انہیں مزاحمت کا سامنا ہے۔‘ ان کے بقول ’آزاد شامی فوج‘ کے اہلکار شہر میں کافی تعداد میں موجود ہیں۔

احتجاج کا ریکارڈ رکھنے والی ایک مقامی رابطہ کمیٹی کا کہنا ہے کہ قریبی قصبے مضایا میں بھی بمباری کی گئی ہے جہاں سے اطلاعات ہیں کہ کئی لوگ زخمی ہوچکے ہیں۔

احتجاج کا مرکز سمجھے جانے والے شہر حمص سے بھی اطلاعات ہیں کہ وہاں مزاحمت کاروں اور فوج کے درمیان شدید جھڑپیں ہوئی ہیں۔

مقامی رابطہ کمیٹی کا کہنا ہے کہ جمعہ کو ہونے والی جھڑپوں میں ملک بھر میں بارہ شہری مارے گئے ہیں جن میں پانچ صرف حمص میں ہلاک ہوئے ہیں۔

حزبِ اختلاف نے آزاد شامی فوج کی حمایت میں مظاہرے کرنے کی کال دی تھی۔ یہ کال ایسے وقت دی گئی جب ایک روز پہلے ہی حزبِ اختلاف کے گروپوں کے درمیان اتفاق ہوا تھا کہ وہ شام کی قومی کونسل کے ساتھ منظم انداز میں جدوجہد کریں گے۔

شام کی قومی کونسل پہلے طاقت کے استعمال کے حق میں نہیں تھی تاہم آزاد شامی فوج اپنے طور پر مسلح مزاحمت کررہی ہے۔

عرب لیگ کے سربراہ نبیل الاعرابی نے جمعہ کو خبردار کیا کہ شام خانہ جنگی کی جانب بڑھ رہا ہے۔

انہوں نے کہا ’مجھے ڈر ہے کہ خانہ جنگی نہ ہوجائے اور جو کچھ ہورہا ہے اور جو ہم دیکھ اور سن رہے ہیں اس سے لگتا ہے کہ یہ خانہ جنگی کی طرف جا رہا ہے۔‘

اسی بارے میں