جرائم کے تدارک میں بیٹ مین پولیس کا مددگار

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption اس کوشش کی کامیابی کا انحصار بیٹمین میں رابطے کی صلاحتیوں پر ہے۔

برازیل میں سب سے زیادہ جرائم کا شکار ایک علاقے میں پولیس نے منشیات مافیا اور جرائم پیشہ افراد سے نمٹنے کے لئے ’بیٹ مین‘ کو اپنی مدد کے لئے بلایا ہے۔

دراصل برازیل کے ایک ریٹائرڈ افسر ’بیٹ مین ‘ کے روپ میں بچوں کے درمیان جا کر انہیں ڈرگ مافیا کے خلاف آگاہی دیتے ہیں اور جرائم کو پھیلنے سے روکنے کی کوشش میں مصروف ہیں۔

ساو پولو علاقے کی پولیس نے سڑکوں پر ہونے والی تشدد اور نشے کا شکار بننے نو عمر بچوں کی مدد کے لئے بیٹ مین کے اس کردار کا سہارا لیا ہے۔

کالے رنگ کے لباس میں لوگوں کی مدد کے لیے کہیں بھی پہنچ جانے والے اس سُپر ہیرو کو اصل زندگی میں استعمال کیا گیا ہے اور یہ کردار پچاس سالہ ریٹائرڈ افسر آندرے لوئز لِذ پنہیرو ادا کر رہے ہیں۔

لوئز کا کہنا ہے کہ ’میں براہ راست جرم سے مقابلہ نہیں کر رہا لیکن میری جرم سے لڑائی اس سے بچاؤ کے طور پر ہے۔ میں بچوں کو مجرم بننے سے روک رہا ہوں۔ یہ میرا فرض ہے۔ یہی میری لڑائی ہے۔‘

پولیس کے مطابق یہ قدم عام لوگوں میں جرائم سے متعلق بیداری پیدا کرے گا اور محکمہ کو اس سے ضرور فائدہ ہوگا۔ پولیس کے مطابق بیٹ یمن کے کردار کے ذیعے وہ صحیح اور غلط کے درمیان فرق بہتر انداز میں بتا سکیں گے۔

بی بی سی سے بات کرتے ایک افسر وارلے ٹاکیو کا کہنا تھا ’پولیس اچھائی کے لیے کام کرتی ہے اور بیٹ مین بھی اچھائی کے لیے کام کرتا ہے اسی لیے ہم نے بچوں کو مجرم بننے سے روکنے کی کوشش میں مل کر کام کرنے کی کوشش کی ہے۔‘

اس قدم کو پولیس کی ساکھ بہتر بنانے کی ایک کوشش کے طور پر بھی دیکھا جا رہا ہے۔ تاہم اس کوشش کی کامیابی کا انحصار بیٹ مین میں رابطے کی صلاحتیوں پر ہے۔

اسی بارے میں