چین: افواہیں پھیلانے کے الزام میں چھ گرفتار

چین میں حکام کا کہنا ہے کہ پولیس نے چھ افراد کو انٹرنیٹ پر ملک میں بغاوت کی افواہیں پھیلانے کے الزام میں گرفتار کیا ہے۔

حکام کے مطابق گرفتار کیے جانے والے افراد انٹرنیٹ پر افواہیں پھیلا رہے تھے کہ بیجنگ کی گلیوں میں فوج کی گاڑیاں دیکھی گئی ہیں۔

ویب سائٹ پر جاری ہونے والے ان پیغامات نے دنیا بھر کے میڈیا کی توجہ حاصل کی تھی اور بیجنگ کے بعض ناقدین نے رائے دی تھی چین میں بغاوت ہونے جا رہی ہے۔

سٹیٹ انٹرنیٹ انفارمیشن آفس کے مطابق افواہوں کا’ عوام پر بہت برا اثر پڑا‘ ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ ان پیغامات کو جاری کرنے والی سولہ ویب سائٹس کو بند کر دیا گیا ہے۔

دفتر کے ترجمان نے سرکاری خبر رساں ایجنسی زنہوا کو بتایا کہ کئی دیگر افراد کو ’متنبہ یا ہدایت‘ کی گئی ہے۔

ترجمان کے مطابق چین میں سماجی رابطے کی سب سے بڑی ویب سائٹ سنا ویبو کے عملے کے کچھ ارکان پر’ نکتہ چینی اور قانون کے مطابق سزا‘ دی گئی ہے۔

اس ویب سائٹ پر کچھ پیغامات جاری کیے گئے تھے۔

خیال رہے کہ چین میں اس طرح کی افواہیں ایک ایسے وقت پھیلائی گئی ہیں جب حکمران جماعت کے ایک اعلیٰ اہلکار وشولائی کی برطرفی کے بعد سے حکمران طبقہ ایک مشکل وقت سے گزر رہا ہے۔

توقع تھی کہ وشولائی رواں سال کے آخر میں کیمونسٹ پارٹی کی فیصلہ ساز کمیٹی کے سربراہ بن جائیں گے۔

اسی بارے میں